Press Statements

Indian Muslim Mushawarat deliberates on milli, national and international issues

All India Muslim Majlis-e-Mushawarat’s Working Committee meets and deliberates on Elections, Rehabilitation of riot victims, Terrorism, Waqfs, Pathribal, Ban of SIMI, Babri demolition, Repair of mosques in Ayodhya, Police reforms, Saffron Terror, Sachar schemes, Reservation to OBCs, Persecution of Christians, Bangsamoro agreement, Egypt

New Delhi, 12 April, 2014: The Central Working Committee (Majlis-e Amla) of the All India Muslim Majlis-e Musahwarat, the umbrella body of Indian Muslim organisations, met here on Saturday, 12 April under the chairmanship of national President Dr Zafarul-Islam Khan. This was the first meeting of the Working Committee this year as well as of the newly elected AIMMM cemtral team. The meeting was attended by Janab Mohammad Jafar (Vice President), Prof. Mohammad Sulaiman, Mufti Ataur Rahman Qasmi, Janab Masoom Moradabadi and Dr Qasim Rasool Ilyas (General Secretaries), Janab Syed Shahabuddin, Maulana Junaid Ahmad Banarasi, Janab Mohammad Ahmad, Janab Ejaz Ahmed Aslam, Janab Mujtaba Farooq, Janab Amanullah Khan, Janab Khawja M. Shahid and Prof. Humayun Murad.

The AIMMM Working Committee deliberated on organisation, milli, national and international issues. The meeting remembered important personalities of the community who departed after the last meeting of AIMMM, offered condolences to their families and the milliat and prayed for them, especially  MAULANA AHMAD ALI QASMI, former vice president and former general secretary of the All India Muslim Majlis-e Mushawarat, died at Ranchi on 21 March at the age of 80. He was among the few surviving original members of AIMMM and had been associated with it ever since. He played a leading role in the merger last October of the two factions of AIMMM which had parted ways in 2000. A condolence meeting to pay tribute to his services was held at the AIMMM central office on 23 March; ALLAMA USAIDUL HAQ QADIRI AZHARI, Islamic scholar, researcher and heir to Khanqah Aalia Qadiriya, Badaun who had gone to Iraq on pilgrimage along with a 25-member delegation, was killed on 4 March along with many others in a terrorist attack;DR. SHAKIR MUKHI, philanthropist, AFMI's trustee and former president, died on 7 February, 2014; < b style="mso-bidi-font-weight:normal">MAULANA ZUBAIRUL HASAN, eminent religious scholar, Ameer of Tablighi Jamaat, died of pneumonia and kidney failure at Delhi's R. M. Lohia Hospital on 18 March at the age of 65 years; HAKIM SAIFUDDIN AHMAD, famous Unani hakeem, former President of All India Unani Tibbi Conference and former adviser (Unani) to Govt of India died in Meerut on 11 March at the age of 90 years; Prof. SOGHRA MEHDI, Urdu litterateur, critic, novelist and retired teacher of Jamia Millia Islamia died in Delhi on 17 March at the age of 75 years; Prof MAHMOOD ILAHI noted poet, critic, researcher and author died on 19 March at the age of 84 years. He served as chairman of UP Urdu Academy for three terms; MUHAMMAD QUTUB, noted Egyptian Islamic scholar and thinker, died in Jeddah on 5 April at the age of 9 5 years. The meeting also remembered and prayed for the soul of KHUSHWANT SINGH, famous journalist and author, a great friend of the Muslim community and a lover of Urdu language, who died at Delhi on 20 March at the age of 99.

The meeting deliberated on milli, national and international issues. It discussed Mushawarat’s efforts to help consolidate the secular vote against fascist and communalist forces and deliberated on the ongoing activities to celebrate AIMMM’s golden jubilee later this year. The meeting passed the following resolutions:

Elections

The AIMMM urges all secular, especially Muslim voters, to consciously use their vote in favour of strong secular and clean-image candidates in each constituency with a resolve to defeat fascist and communalist candidates by resorting to tactical voting, making sure not to  allow votes to be wasted by division.

Communal riots

The Central government failed in its duty to get the Communal Violence (Protection) Bill passed by Parliament although the Union Home Ministry’s latest data says that the year 2013 witnessed 30 percent more riots than the previous year. The numbers of the dead and injured too have increased in the same proportion over the same period. We hope that the next government will get the Communal Violence Bill passed in order to check this scourge and also to make the instigators of riots pay by way of a ban on their fighting elections for a suitable period so that riots are not used as a weapon to polarise voters on communal lines.

Rehabilitation of riot victims

Muzaffarnagar/Shamli riot victims of last September are yet to be rehabilitated. About half of the uprooted persons have returned to their villages while some 20,000 still live in refugee camps in abject conditions and about same number lives with relatives or in rented accommodations in the area. It is the duty of the state government to rehabilitate all the uprooted people who are unwilling to return to their villages, by building houses for them under various central and state welfare housing schemes for the poor and help then to restart their lives with dignity.

Terrorism

AIMMM registers its protest in strongest terms against the continuing arrests by Central and state governments forces of Muslims on mere suspicion and without demonstrable evidences. Recent arrests from Delhi and Rajasthan are a clear indication that terrorism is being used by both Congress and BJP as a political tool. The sensational arrest of Maulana Abdul Qavi from Delhi airport by Gujarat police is a clear example of how “terror” is being used for political gains. The Maulana, said to be wanted in an 11-year old case, led an open life in Hyderabad and had even visited Gujarat recently. Moreover, the person he is accused of helping and sheltering has already been honorably acquitted in the same case. The post-midnight attack on a Muslim locality in Mumbra on 13 March and mass arrest of 80 Muslim males also provides a clear proof of the Police lawlessness. The brazen use of terror as a political tool to show that this or that party is committed to national “security” must stop as it will only vitiate the communal peace and help our enemies.

Waqfs

The AIMMM registers its regret that despite all assurances, demolitions of mosques continue – the latest being in Mehrauli on 8 April and Gurgaon in the night of 12 February. Shah-e Mardan Karbala Jorbagh issue is allowed to simmer due to political interference in support of illegal occupiers.  It is true that orders have been issued to return 123 occupied waqf properties to the Delhi Waqf Board but still hundreds of such properties remain occupied in Delhi and tens of thousands elsewhere in the country. All these must be returned at the earliest, so that same may be utilised for the welfare of the community for which they were endowed.

Pathribal

The AIMMM demands justice to the families of the victims of the 14-year-old Pathribal and Chattisingpora massacres by prosecuting the criminals in uniform. Moreover, AIMMM registers its considered opinion that without the abolition of the unjust AFPSA, such crimes by people in uniform will continue as a result of the impunity it bestows on their illegal acts and crimes.

Ban of SIMI

The Central government has once again renewed the ban on the Students Islamic Movement of India (SIMI). The ban is for five years this time according to the amended UAPA law, although there is no serious evidence against the organisation which was first banned in 2001 and was found innocent by the Tribunal headed by Justice Geeta Mittal in August 2008. The ban and arrest of thousands of Muslim youths on the basis of mostly false allegations have destroyed innumerable homes and careers of thousands. Today, for all practical purposes, the organisation does not exist. None of its appeals have as yet been heard by the Supreme Court yet the government keeps banning it time and again turning a blind eye to the activities of umpteen Hindutva terror outfits -- so much so that it did not even accept Maharashtra government’s recommendation to ban Abhinav Bharat which is responsible for Malegaon and other blasts. The AIMMM demands the repeal of the UAPA at the earliest as it is being misused just as TADA and POTA were misused in the past/

Babri demolition

“Operation Janmabhoomi” of Cobrapost has now offered solid evidence based on the confessions of key conspirators behind the demolition of the Babri Masjid in December 1992. They have said on camera that the demolition was a well-planned and much rehearsed conspiracy and not an accident as claimed by key defendants in the Babri demolition cases. AIMMM asks the Union Home Ministry to take cognisance of this new development and include this new evidence in supplementary chargesheets to be filed in these cases.

Repair of mosques in Ayodhya

AIMMM registers its pain that despite the passage of over two decades, the local authorities in Ayodhya continue to deny Muslims the right to rebuild and repair mosques and dargahs demolished or damaged by Hinduta goons in December 1992 when they demolished the Babri Mosque. AIMMM fears that there is a secret conspiracy to erase the Islamic heritage of Ayodhya which consists of hundreds of mosques and mazars including the celebrated grave of Shees Paighambar which was a target of Hindutva hate last December.

Police reforms

One reason for most problems of our country is that laws enacted by the British colonial government to protect itself and its functionaries are still mostly intact, especially the Police Act of 1861 which is based on the premise that its duty is to protect and shield the government instead of serving the interests of the people. Police reform by the way of enacting a new people-friendly law is long overdue. The recent report of Kerala DGP that “most of the police officers of the rank of sub-inspector of Police are corrupt, inept to discharge their duties and are clinically lazy” puts the nail on the head and demands an urgent solution.

Saffron Terror

AIMMM registers its deep regret that the Central government has apparently taken no notice of the long interview given by Swamy Aseemannad, a mastermind of many Hindutva terror attacks, to the February 2014 issue of Caravan magazine in which he has candidly said and named top RSS functionaries who blessed, planned and financed terror attacks. None of those named persons, some of whose names are already mentioned in the Malegaon 2008 and Ajmer blasts chargesheets, have ever been even interrogated. It is a clear case of double standards. The AIMMM is also at a loss at to the Central government’s silence over top army, bureaucracy and police officers rushing to join the saffron party immediately after retirement, which demonstrates the extent to which Hindutavadis have infiltrated into our system.

Sachar schemes

The AIMMM reiterates its dismay that despite all tall claims and advertisements, most schemes started as a result of the Sachar report still remain on the drawing board. Only the scholarship scheme has been implemented to some extent although the application requirements and lack of monitoring and evaluation mechanisms make its efficacy doubtful. Complete transparency is required in the implementation and monitoring of all schemes in addition to simplification of the application process because the intended poor beneficiaries cannot easily comply with same. Moreover, some measures like the Equal Opportunity Commission should be open to all marginalised sections of our society and this commission should be independent with statutory powers.

Reservation to OBCs

AIMMM welcomes the Madras High Court verdict that the benefits enjoyed by a member of a backward class person should continue after his/her conversion to another religion. AIMMM urges the Union government to urgently reply to the Supreme Court stating its position on the three-year-old query about the application of SC/ST reservations to Muslim and Christian Dalits which remains denied as a result of the controversial Presidential Order of 1950.

Persecution of Christians

The AIMMM registers its deep anguish that the Christians community in the country continues to suffer mainly at the hands of saffron goons who are protected by the law and order machinery. The latest report by a Christian organisation says that the year 2013 registered 151 incidents of attacks on Christians and their properties across the country. It is the duty of the Union and state governments to protect minorities and weaker sections from the onslaught of ultras enjoying support of influential persons and outfits.

Bangsamoro agreement

AIMMM welcomes the Comprehensive Agreement on the Bangsamoro signed on 27 March between the Government of the Philippines and the Moro Islamic Liberation Front (MILF) and hopes that it will help end the four-decades-old armed conflict in Mindanao. Both sides, especially the government of Manila, should show flexibility and respect for the other side in order to make this agreement a success.

Egypt

AIMMM registers its regret at the consistent attempts of the military government in Egypt to criminalize and persecute Muslim Brotherhood which only two years ago  won the support of the majority of Egyptian voters in repeated elections and a constitutional referendum. Such policy by any government is dangerous for the present and future of its country. AIMMM advises the Egyptian rulers to seek a peaceful solution and honorable settlement of the Egyptian political crisis caused by last year’s military coup. The AIMMM also advises Gulf regimes to desist from supporting a military coup and criminalising a popular movement which has done no harm to them. This policy will only hurt the long term interests and survival of these regimes.

[end]

Note: Photos of this meeting are available here.

Issued at New Delhi on 12 April 2014 by
 -------------------------------------------------------
ALL INDIA MUSLIM MAJLIS-E-MUSHAWARAT
[Umbrella body of the Indian Muslim organisations]
D-250, Abul Fazal Enclave, Jamia Nagar, New Delhi-110025  India
Tel.: 011-26946780  Fax: 011-26947346

Email: mushawarat@mushawarat.com   Web: www.mushawarat.com  Photos: flickr/images

 

Urdu Translation:

مشاور ت کی مجلس عاملہ میں ملی، قومی، عالمی مسائل پرغور و فکر اور منظور شدہ قرادادیں


نئی دہلی۔ آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت کی مجلس عاملہ کی میٹنگ یہاں 12اپریل2014 کو قومی صدر ڈاکٹرظفرالاسلام خاں کی صدارت میں منعقد ہوئی۔ یہمشاورت کی نومنتحب عاملہ کی اور سال رواں کی پہلی میٹنگ تھی جس میں جنابمحمد جعفر(نائب صدر) پروفیسر محمد سلیمان، مفتی عطاء الرحمٰن قاسمی، جنابمعصوم مرادبادی اور ڈاکٹر قاسم رسول الیاس (جنرل سیکریٹریز ) ، جناب سیدشہاب الدین ، مولانا جنید احمد بنارسی، جناب محمد احمد، جنا ب اعجازاحمداسلم، جناب مجتبیٰ فاروق، جناب امان اللہ خاں، جناب خواجہ ایم شاہد اورپروفیسر ہمایوں مراد نے شرکت کی۔


عاملہ نے تنظیمی، ملی، قومی اور عالمی امور پر تبادلہ خیال کیا۔ ممبران نےان اہم شخصیات کے لئے دعائے مغفرت کی اور ان کے اہل خاندان اور ملت سےتعزیت کی، جن کی وفات گزشتہ میٹنگ کے بعد ہوئی ۔ خصوصاًدرج ذیل کویادکیا گیا:


مشاورت کے سابق نائب صدر، سابق جنرل سیکریٹری مولانا احمدعلی قاسمی ،جن کا۲۱مارچ کو بعمر 80سال رانچی میں انتقال ہوگیا۔ وہ مشاورت کے بقید حیاتچند بانی ممبران میں سے تھے اور روزاول سے تنظیم سے وابستہ رہے۔ انہوں نےمشاورت کو ،جو سنہ 2000میں دو حصوں میں تقسیم ہوگئی تھی ،گزشتہ سال پھر سےمتحد کرانے میں ایک اہم کردار ادا کیا تھا۔مشاورت نے ان کو خراج عقیدت پیشکرنے اور ان کی خدمات کا اعتراف کے لئے 23؍مارچ کو ایک تعزیتی جلسہ بھی کیاتھا۔علامہ اسیدالحق قادری ازہری، معروف اسلامی اسکالر، محقق اور خانقاہعالیہ قادریہ بدایوں کےسجادہ نشین، 4مارچ کوعراق میں چند دیگر افراد کےساتھ ایک دہشت گرد حملے میں جاں بحق ہوگئے ۔ وہ ایک 25رکنی وفد کے ساتھزیارت کے لئے عراق گئے تھے۔ ڈاکٹر شاکر مکھی، افمی کے ٹرسٹی اور سابق صدرکا7فروری کو انتقال ہوگیا۔ مولانا زبیرالحسن، معروف مذہبی شخصیت اور تبلیغیجما عت کے امیرکا بعمر 65سال18مارچ کو دہلی کے رام منوہر لوہیا اسپتالمیں انتقال ہوگیا۔ حکیم سیف الدین احمد، معروف یونانی طبیب، آل انڈیایونانی طبی کانفرنس کے سابق صدراور وزارت صحت، حکومت ہند کے سابق مشیربرائےطب یونانی کا 11 مارچ کو میرٹھ میں بعمر 90سال انتقال ہوگیا۔ پروفیسرصغریٰ مہدی، اردو ادیبہ، ناول نگار، جامعہ ملیہ اسلامیہ کے شعبہ اردو کیسابق استاد کا 17مارچ کو 75سال کی عمر میں دہلی میں انتقال ہوگیا۔ پروفیسرمحمود الٰہی ، معروف شاعر، نقاد اور محقق کا 19مارچ کو بعمر 84سال انتقالہوگیا۔ انہوں نے تین ٹرم یوپی اردو اکیڈمی کے چیرمین کی حیثیت سے خدماتانجام دیں۔ محمد قطب، معروف مصری عالم دین اور مفکرکا 5اپریل کو جدہ میںانتقال ہوگیا۔ وہ 95سال کے تھے۔ مجلس عاملہ نے معروف صحافی، مصنف، اردوزبان وادب کے دلدادہ اور مسلمانوں کے عظیم دوست جناب خوشونت سنگھ کو بھییاد کیا اور ان کی آتما کے لئے دعا کی۔ان کا انتقال 99سال کی عمر میں20مارچ کو نئی دہلی میں ہوگیا۔


مجلس عاملہ نے ملی ، قومی اور عالمی معاملات پر غور کیا اور فرقہ پرست،فاشسٹ طاقتوں کے مقابلے میں سیکولر ووٹوں کو متحد کرنے کے لئے اپنی کوششوںکا جائزہ لیا ۔ مشاورت کی جوبلی تقریبات کے لئے جاری سرگرمیوں پر بھیتبادلہ خیال کیا گیا ،جواس سال کے آخر میں منعقد ہونگی۔ مجلس عاملہ نے درجذیل قرادادیں بھی منظور کیں:


الیکشن
آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت تمام سیکولر رائے دہندگان ، خصوصاً مسلمانوں سےاپیل کرتی ہے کہ وہ اپنے حق رائے دہی کا استعمال ہرایک حلقہ انتخاب میں صافشبیہ کے سیکولر امیدوار کے حق میں اس عزم کے ساتھ کریں کہ فرقہ پرست فاشسٹامیدواروں کو شکست دینی ہے ۔ اس کے لئے حکمت کے ساتھ ہر حلقے میں امیدوارکا انتخاب اس طرح کریں کہ ان کا ووٹ تقسیم ہوکر ضائع نہ ہونے پائے۔


فرقہ ورانہ فسادات
مرکزی حکومت مجوزہ انسداد فرقہ ورانہ فسادات بل پارلیمنٹ سے منظور کرانےمیں ناکام رہی حالانکہ وزارت داخلہ کے اعداد و شمار سے واضح ہے کہ سنہ 2013میں اس سے گزشتہ سال کے مقابلے ملک بھرمیں فرقہ ورانہ فسادات کے واقعاتمیں 30فیصد اضافہ ہوا ہے۔ اس مدت میں مارے گئے اور زخمی ہونے والے افراد کیتعداد میں بھی اسی تناسب سے اضافہ ہوا ہے۔ ہم امید کرتے ہیں اگلی سرکارانسداد فرقہ ورانہ فسادات بل کو پارلیمنٹ سے منظور کرائے گی تاکہ فسادات کیصورت میں رونما ہونے والی اس درندگی کو روکا جاسکے۔امید ہے کہ حکومتفسادات بھڑکانے والوں کو اس طرح سزا دینے کا نظم بھی کریگی جس کے تحت ان پرآئندہ مناسب مدت تک چناؤ میں حصہ لینے پر پابندی عائد رہے تاکہ فساداتکراکے فرقہ ورانہ لائنوں پر رائے دہندگان کوبانٹانہ جاسکے۔


فساد متاثرین کی بازآبادکاری
گزشتہ ستمبر میں مظفر نگر اور شاملی اضلاع میں فسادات کی بدولت اپنے گھروںسے اجڑے ہوئے لوگوں کی بازآبادکاری کا کام ابھی پورا نہیں ہوا ہے۔ اگرچہتقریبا آدھے لوگ اپنے گھروں کو واپس لوٹ گئے ہیں، مگر اب بھی کوئی بیسہزارافراد مختلف رفیوجی کیمپوں میں نہایت کسمپرسی کی حالت میں پڑے ہیں۔ کچھلوگ اپنے رشتے داروں کے یہاں اور کچھ کرائے کی جگہوں پربھی رہ رہے ہیں۔ یہریاستی سرکار کی ذمہ داری ہے کہ ان سب لوگوں کو جو اپنے گاؤوں کو واپسجانا نہیں چاہتے دوبارہ بسائے۔ ان کو غریبوں کے لئے مختلف مرکزی اور ریاستیاسکیموں کے تحت مکان تعمیر کراکر دے تاکہ وہ اپنی معمول کی زندگی پھر شروعکرسکیں۔


دہشت گردی
آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت بغیر کسی واضح ثبوت ،محض شک کی بنیاد پرمسلمانوں کی مسلسل گرفتاریوں کی، جن میں مرکزی اور ریاستی ایجنسیاں ملوّثہیں ،سخت مذمت کرتی ہے۔ دہلی ، مہاراشٹرااور راجستھان میں حالیہگرفتاریاں واضح اشارہ کررہی ہیں کہ کانگریس اور بھاجپادونوں ان گرفتاریوںکو اپنے سیاسی فائدے کے لئے استعمال کررہی ہیں۔ مولانا عبدالقوی کی دہلیکے ہوائی اڈے سے سنسنی خیز گرفتاری ، جو گجرات پولیس نے انجام دی ہے، ایککھلی مثال ہے کہ ’’دہشت گردی‘‘ کو کس طرح سیاسی فائدے کے لئے استعمال کیاجارہا ہے۔ کہا یہ گیا ہے کہ مولانا ایک گیارہ سال پرانے کیس میں مطلوب تھےحالانکہ کہ وہ حیدرآباد میں کھلے بندوں رہتے ہیں اور حال ہی میں گجرات بھیگئے تھے۔ مزید یہ کہ مولانا پر جس شخص کو پناہ دینے کا الزام ہے، وہ اسیکیس میں عدالت سے باعزت بری ہوچکا ہے۔

ممبرا کے ایک مسلم علاقے پر13 مارچ کو نصف شب کے بعدپولیس کاروائی اور80مسلمان مردوں کی یک مشت گرفتاری پولیس کی قانون سے کھلواڑ اور پامالی کیبدترین مثال ہے۔ یہ گرفتاریاں یہ دکھانے کے لئے ہیں کہ حکمراں پارٹی قومیتحفظ کے معاملے بڑی چاق چوبند ہے۔ یہ واقعاتدہشت گردی کے بہانے کو سیاسیہتھیار کے طور پر استعمال کرنے کی کھلی مثالیں ہیں۔ اس طرح کی کاروائیوں کوروکا جانا چاہئے کیونکہ ان سے فرقہ ورانہ امن وشانتی میں خلل واقع ہوتا ہےاور ہمارے دشمنوں کو مددملتی ہے۔


اوقاف
مشاورت اس امر پر اپنا غم و غصہ درج کراتی ہے کہ یقین دہانیوں کے باوجودمساجد کے انہدام کا سلسلہ جاری ہے۔ 8اپریل کو مہرولی میں اور اس سے قبل12فروری کو گوڑگاؤں میں مساجد کی مسماری اس سلسلہ کے تازہ کڑیاں ہیں۔ اسیطرح کربلا شاہ مرداں کے تنازعہ کو غیر قانونی قابضین کے حق میں سیاسیمداخلت کرکے طول دیا جارہا ہے۔ یہ صحیح ہے کہ دہلی میں مقبوضہ 123 جائدادوںکو دہلی وقف بورڈ کو واپس کرنے کے احکامات جاری کردئے گئے ہیں، مگر ابھیدہلی میں ایسی سینکڑوں اور ملک بھر میں ہزاروں وقف املاک ناجائز قبضے میںہیں۔ ان سب کو جلد از جلد واگزار کیا جانا چاہئے تاکہ ان کا صحیح استعمالاس فرقے کی بہبود کے لئے ہو جس کے لئے ان کو وقف کیا گیا ہے۔


پتھری بل
مشاورت مطالبہ کرتی ہے کہ وردیمیں ملبوس مجرموں کو سزا دلا کر پتھری بلاور چھتی سنگھ پورا کی14سا ل قبل کی وارداتوں کے مظلومین کو انصاف دلایاجائے۔مشاورت اپنی یہ پختہ رائے پھر درج کراتی ہے کہ غیر منصفانہقانون’مسلح فورسز خصوصی اختیارات ایکٹ(AFSPA) کوکالعدم کئے بغیر وردیمیں ملبوس افراد کو غیر قانونی کاروائیاں اور جرائم کرنے سے نہیں روکاجاسکتا۔


سیمی پر پابندی
مرکزی حکومت نے ایک بار پھر اسٹوڈنٹس اسلامک موومنٹ (سیمی) پر پابندی کااعادہ کردیا ہے۔ اس مرتبہ یہ پابندی ترمیم شدہ قانون ’انسداد غیر قانونیسرگرمی ایکٹ یعنیUAPA کے تحت پانچ سال کے لئے عائد کی گئی ہے، حالانکہمذکورہ تنظیم کے خلاف ، جس پر پہلی مرتبہ 2001میں پابندی نافذ کی گئی تھی،کسی طرح کا کوئی ثبوت نہیں ہے اور2008 میں ہی جسٹس گیتا متل ٹربیونل نے استنظیم کو بے قصور پایا تھا۔ اس پابندی کی آڑمیں بغیر کسی ثبوت، بے بنیادالزامات لگاکر ہزاروں مسلم نوجوانوں کو گرفتار کرکے ان کے مستقبل کواور بہتسے خاندانوں کو تباہ کیا جا چکا ہے۔ آج عملااس تنظیم کا کوئی وجود نہیںرہا ہے ۔اگرچہ اس کی کسی اپیل پر سپریم کورٹ نے بھی کوئی سماعت ابھی تکنہیں کی ہے مگرحکومت ہر بار پابندی کا اعادہ کرتی رہتی ہے۔اس معاملے میںحکومت کے دوہرے پیمانے اس سے ظاہر ہوتے ہیں اس نے ہندتووا دی ہشت گردتنظیموں کی سرگرمیوں سے آنکھیں بند کررکھی ہیں، یہاں تک کہ ابھینو بھارتنام کی تنظیم پر پابندی لگانے کی مہاراشٹرا سرکار کی سفارش کوبھی منظورنہیں کیا جو مالیگاؤں اور دیگر دہشت گرد دھماکوں میں ملوّث پائی گئی ہے۔مسلم مجلس مشاورت مطالبہ کرتی ہے کہ’انسداد غیر قانونی سرگرمیاں ایکٹ‘ (UAPA) کو جلد از جلد کالعدم کیا جائے کیونکہ اس کا بھی اسی طرح غلطاستعمالہورہا ہے جس طرح اس قبل ٹاڈا اور پوٹا کا ہوتا تھا۔


بابری مسجد کا انہدام
کوبرا پوسٹ کے ’آپریشن جنم بھومی‘ نے 6 دسمبر 1992 کو بابری مسجد کے انہدامکی سازش کے مزید پختہ ثبوت ، سازش میں شریک اہم افراد کے اعترافی بیاناتکے حوالہ سے پیش کردئے ہیں۔ سازش میں شریک کئی افراد نے کیمرے کے سامنے یہاعتراف کیا ہے کہ بابری مسجد کا انہدام ایک منصوبہ بند کاروائی تھی جس کیخوب اچھی طرح سے تیاری کی گئی تھی۔ اس لئے یہ کوئی غیر ارادی اور اتفاقیکاروائی نہیں تھی جیسا کہ اس کیس کے ملزمان عدالت میں اپنی صفائی میں کہتےہیں۔ مشاورت مرکزی وزارت داخلہ سے مطالبہ کرتی ہے کہ وہ اس نئی شہادت کانوٹس لے اورعدالت میں ضمنی فرد جرم داخل کرکے ان اعترافی بیانات کو بطوراضافی شہادت شامل کیا جائے۔


ایودھیا میں مساجدکی مرمت
مسلم مجلس مشاورت اس امر پر سخت افسوس کا اظہار کرتی ہے کہ دو دہائیوں سےزیادہ مدت گزرجانے کے باوجود ضلع انتظامیہ اجودھیا میں ان مساجد، مقابر ادردرگاہوں وغیرہ کی مرمت اور تعمیر نہیں کرانے دے رہا ہے جن کو بابری مسجدکے انہدام کے وقت 1992 میں ہندو شورہ پشتوں نے نقصان پہنچایا تھا یا منہدمکردیا تھا۔ مسلم مجلس مشاورت کو اندیشہ ہے کہ کہیں ایودھیامیں اسلامیآثاروں کو مٹادینے کی سازش تو نہیں ہورہی ہے جن میں سینکڑوں مساجداورمزارات شامل ہیں، ان میں معروف ’شیث پیغمرکا مزار‘ بھی شامل ہے جس کو گزشتہسال نفرت پھیلانے والے ہندو انتہا پسندوں نے نشانہ بنایا تھا۔


پولیس اصلاحات
ہمارے ملک میں بہت سے مسائل کی جڑ وہ قوانین ہیں جو برطانوی سامراج کےدوران سامراج اور اس کے کارندوں کی حفاظت کی غرض سے نافذ کئے گئے تھے اورجن میں بہت سے ابھی تک جوں کے توں نافذ ہیں۔ خاص طور سے پولیس ایکٹ 1861 جسکی منطقی اساس یہ ہے کہ پولیس کااصل کام حکومت اور اس کے کارندوں کو بہرحالتحفظ فراہم کرنا ہے نہ کہ عوام کی خدمت انجام دینا۔ عرصہ سے ضرورتمحسوس کی جارہی ہے کہ پولیس ایکٹ میں اس طرح اصلاحات کی جائیں کہ یہ فورسعوام دوست بنے۔ کیرالہ ڈی جی پی کی حالیہ رپورٹ میں یہ اعتراف کہ ’’ سبانسپکٹر درجہ کے اکثر پویس افسران بدعنوان، اپنی دیوٹی کی انجام دہی میںنااہل اور جسمانی طور پر سست ہیں‘‘ اس بات کو مزید پختہ کرتا ہے کہ اس پرتوجہ دی جائے اور پولیس ایکٹ میں ضروری اصلاحات فوری طور پرنافذ کی جائیں۔


بھگوا دہشت گردی
مسلم مجلس مشاورت سخت افسوس کا اظہار کرتی ہے کہ مرکزی حکومت نے کئیہندتووا دی ہشت گرد حملوں کے سرغنہ سوامی اسیمانند کے فروری 2014 میں جریدہکارواں‘ کودئے گئے اس طویل انٹرویو کا ابھی تک کوئی نوٹس نہیں لیا ہے جسمیں انہوں نے سیدھے طور پر آر ایس ایس کے چوٹی کے ان لیڈروں کے نام لئے ہیںجنہوں نے دہشت گرد سرگرمیوں کی حوصلہ افزائی کی، منصوبندی میں حصہ لیا اورمالی وسائل فراہم کئے۔ ان میں سے چند کے نام مالیگاؤں سنہ 2008کے دھماکوںاور درگاہ شریف اجمیر کے دھماکوں کی چارج شیٹ میں بھی شامل ہیں مگران سے آجتک پوچھ تاچھ تک نہیں ہوئی۔ یہ واضح طور سے سرکار کی دوہرے معیار کی بدولتہے ۔


مسلم مجلس مشاورت اعلی سول، پولیس اور فوج کے افسران کے ریٹائرمنٹ کےفوراً بعد یا استعفے دیکر بھگوا تنظیموں میں شامل ہونے کے معاملات پر مرکزیحکومت کی خاموشی پر بھی حیران ہے ۔ سبکدوش افسران کے اس طرح بڑی تعداد میںبھگوا صفوں میں شامل ہوجانے سے ظاہر ہوتا ہے ہندوتوادی ہمارے سرکاری نظاممیں کتنی گہرائی تک گھس چکے ہیں۔


سچر سفارشات
مسلم مجلس مشاورت اس امرپر افسوس کا اظہار کرتی ہے کہ تمام تر بڑے بڑےدعووں اور مشتہری کے باوجود ، سچر رپورٹ کے بعد اعلان شدہ بہت سی اسکیمیںابھی تک کاغذوں تک محدود ہیں۔ کسی حد تک صرف طلباء کے لئے اسکالر شپ اسکیمضرور نافذ ہوئی ہے، تاہم درخواستوں کی خانہ پوری اور مطلوبہ دستاویزات کیدستیابی میں دشواریوں، نگرانی اور بعد نفاذ جائزوں کے نظام کی عدم موجودگیکی وجہ سے اس ااسکیم کا موثر نفاذ بھی مشکوک ہے۔ اسکیم کے نفاذ کی موثرنگرانی اور شفافیت کے ساتھ درخواستوں کی خانہ پوری کو بھی سہل کرنے کیضرورت ہے کیونکہ اس اسکیم کے تحت جس محروم طبقہ کی مدد مطلوب ہے ان کے لئےدرخواست کی خانہ پوری اور اس کے ساتھ مطلوبہ دستاویزات کی فراہمی آسان نہیںہے۔


اوبی سی ریزرویشن
مسلم مجلس مشاورت مدراس ہائی کورٹ کے اس فیصلے کا خیر مقدم کرتی ہے کہپسماندہ طبقہ کے افراد کو حاصل مراعات، مذہب تبدیل کرلینے کے بعد بھیلازماًجاری رہنی چاہیں۔مشاورت مرکزی حکومت سے پرزور مطالبہ کرتی ہے کہ مسلماور عیسائی دلتوں کو ریزرویشن کے سوال پر سپریم کورٹ کے اس استفسار کافوری طور سے جواب دے جس میں تین سال قبل مرکز سے پوچھا گیا تھا کہ وہ اپناموقف واضح کرے۔ 1950کے متنازعہ صدارتی حکم کی وجہ سے مسلم اور عیسائی ایسسی؍ایس ٹی کو ان مراعات سے محروم رکھا جاتا ہے۔


عیسائیوں پر مظالم
مسلم مجلس مشاورت اس امر پر گہرے غم و غصہ کا اظہار کرتی ہے کہ ملک میںعیسائی فرقہ کے لوگ خاص طور سے بھگوا غنڈوں کے مسلسل ظلم و ستم کا نشانہبنتے رہتے ہیں،اور ظلم کرنے والوں کو پولیس و سول انتظامیہ کی پشت پناہیحاصل رہتی ہے۔عیسائی تنظیموں کی تازہ رپورٹ کے مطابق گزشہ سال عیسائیوںپراور ان کی املاک پر حملوں کے 151معاملات درج ہوئے ۔ یہ مرکزی اور ریاستیحکومتوں کی ذمہ داری ہے کہ اقلیتوں اور دیگر کمزور طبقات کو ان شدت پسندوںسے تحفظ فراہم کرائے جن کو بااثر افراد اور زورآور تنظیموں کی پشت پناہیحاصل ہے۔


بنگسا مورو معاہدہ
مسلم مجلس مشاورت فلپائن حکومت اور مورو اسلامک لبریشن فرنٹ کے درمیان27مارچ کے بنگسامورے معاہدے کا خیرمقدم کرتی ہے اور امید کرتی ہے کہ اس سےمنڈاناؤ میں گزشتہ چار دہائیوں سے جاری مسلح تصادم کے خاتمے میں مدد ملےگی۔معاہدے کی کامیابی کے لئے ضروری ہے کہ دونوں فریق، خصوصا فلپائن حکومت،دوسرے فریق کے لئے نرم روی اور تحمل کا مظاہرہ کریں۔


مصر
مسلم مجلس مشاورت مصر میں الاخوان المسلمون کو ایک مجرم تنظیم قرار دیکر اسکے کارکنوں پر زیادتیوں اورمقدمات قائم کرنے کی فوجی حکومت کی کاروائیوںپر اظہار افسوس کرتی ہے ۔ دو ہی سال قبل مصر کے رائے دہندگان کی اکثریت نےبار بار انتخابی عمل کے دوران اور آئین کی منظوری کے وقت اخوان کی تائید وحمایت کی تھی ۔ کوئی بھی حکمراں گروہ جو اس طرح کی پالیسی اختیار کرتا ہے،وہ ملک کے حال اور مستقبل کے لئے خطرہ ہوتاہے۔مشاورت مصر کے فوجی حکام کومشورہ دیتی ہے کہ وہ مصر کے سیاسی مسئلہ کا، جو گزشتہ سال اقتدار پر فوجیقبضےسے پیدا ہوا ہے، پرامن اور باعزت حل تلاش کرے۔ مشاورت خلیجی ممالک کوبھی مشورہ دیتی ہے کہ وہ فوجی بغاوت کی تائید و حمایت اور عوام میں مقبولایسی تحریک کو مجرمانہ قرار دینے سے باز رہیں جس نے ان کو کوئی ضرر نہیںپہنچایاہے۔یہ خلیجی ممالک جو پالیسی اختیار کررہےہیں، وہ خود ان کےمفادات کے خلاف اور ان کے اقتدار کی بقا کے لئے مضر ہے۔


)
ختم)

 براہ کرم اس اجلاس کی تصویرں یہاں سے لیں:
https://www.flickr.com/photos/mushawarat/sets/72157643832090273/

blog comments powered by Disqus