Press Statements

Indian Muslim Mushawarat’s CC deliberates on milli, national and international issues

Original_aimmm-logo-white
All India Muslim Majlis-e Musahwarat’s Central Committee deliberates on milli, national and international issues

New Delhi, 20 December, 2014: The Central Committee (Markazi Majlis) of the All India Muslim Majlis-e Musahwarat, the umbrella body of Indian Muslim organisations, met here on Saturday, 20 December, 2014. This was the second and last meeting of the Central Committee this year. The meeting deliberated on community, national and international issues. Members discussed Mushawarat’s response to the post-election political scenario in the country as well as the steps being taken to rejuvenate Mushawarat units in a number of states. Members expressed satisfaction that Mushawarat units in UP, West Bengal, Tamil Nadu, Delhi State and Gujarat have been rejuvenated and are now functioning well to face the challenges of the new political climate.



The meeting expresse concen over rising communalism in the country in the wake of the triumph of BJP in the last general elections and warned that the activities of Hindutva activists on various fronts “run against our Constitution and laws and will end up pulling down the secular edifice of our polity and will lead to a civil war situation for which the present government and its head alone will be responsible.”

In another resolution, the meeting appealed to all peace-loving Indians, especially Muslims, to work harder for communal harmony and amity and, in particular, to form peace and amity committees in all areas to foster brotherhood and to foil the designs of the hatemongers.”

The meeting condemned all kinds of terrorism and paid homage to the victims of the recent attack on a Peshawar school and cautioned states, Muslim and non-Muslim, “to desist from using terror as state policy and to stop supporting dubious organisations in order to serve their plans to plunder the resources of other nations. Every case of state-supported terrorism has only boomeranged on its supporters.”

Another resolution said that both the J&K state and Central governments “let down the victims of the worst floods in Kashmir’s recent history” and asked both the governments to show seriousness and sense of accountability in dealing with this huge task. AIMMM appealed to the Union government to allow foreign relief agencies to enter the Valley to provide the much-needed rehabilitation and re-construction help.  

The meeting also remembered important personalities of the Muslim community which departed for their heavely abode since the last meeing. They included  Abdur Rahman Antulay, veteran Congress leader who died on 2 December and Syed Muhammad Ali Kazmi, former Advocate General of UP and former Chairman of UP Minorities Commission who died on 25 November.

The meeting was held under the chairmanship of the national President Dr Zafarul-Islam Khan. It was attended byMaulana Syed Jalaluddin Umari, President of Jamaat-e Islami Hind,  Janab Syed Shahabuddin, Janab Mohammad Jafar,  Hafiz Rashid Ahmad Choudhury (Vice Presidents, AIMMM),  Prof. Mohammad Sulaiman, Mufti Ataur Rahman Qasmi, Mr. Masoom Moradabi, Dr Qasim Rasool Ilyas (General Secretaries, AIMMM),  Janab Nusrat Ali, Janab Kamal Faruqi,  Prof. Shakil Samdani, Mr. Abdul Rashid Agwan,  Janab Mohammad Ahmad, Janab Shafi Madani,  Engineer Mohammad Salim, Janab Rashid Ahmad Khan, IAS (Retd.), Janab S.M.Y.Nadeem, Janab Abdur Rahman Kondu(J&K), Janab Iqbal Beg Mirza (Gujarat), Janab Mujtaba Farooq,  Janab Abdul Khaliq, Dr Anwarul Islam Khan andDr. Syed Ahmad Khan.

Following is the full text of the resolutions passed by the Central Committee of AIMMM in today’s meeting:
 
RESOLUTIONS
 
Communalism

AIMMM is pained to see that leaders of RSS, BJP and allied organisations are actively trying to divide and polarise the Indian society by unleashing their divisive Hindutva agenda. Low key communal violence is taking place all over the country on a daily basis, the old “Shudhi movement” has been re-branded as “ghar wapsi,” saffronisation of history is taking place in right earnest, issues hitherto unthought of like calling for expulsion of “non-Indian” minorities from India, turning India into a Hindu country by the year 2021, etc., are being raised ad nauseum. All this is taking place while the Central government and its head are maintaining studied silence. AIMMM believes that this is a clever division of labour where the BJP government will talk of “development” while its allies run riot to implement the age-old plans of RSS and Hindu Maha Sabha. AIMMM warns that these activities by Hindutva activists run against our Constitution and laws and will end up pulling down the secular edifice of our polity and will lead to a civil war situation for which the present government and its head alone will be responsible.

Uniform Civil Code

Supporters of the new government at the Centre are once again raking up the contentious Uniform Civil Code issue. Let the proponents of the UCC first agree on the contours of the proposed code and come up with a draft before any debate is attempted. And before doing that, let there be a Uniform Financial Code treating all Indians equally in matters of income tax and abolishing the unconstitutional and illegal abomination known as “Hindu Undivided Family” (HUF) by which millions of Hindu families all over the country evade taxes to the tune of trillions of rupees every single year. HUF should be abolished altogether or the scheme is extended to all Indian families without religious discrimination.

Communal harmony

Reiterating its message since its very inception, AIMMM appeals to all peace-loving Indians, especially Muslims, to work harder for communal harmony and amity and, in particular, to form peace and amity committees in all areas to foster brotherhood and to foil the designs of the hatemongers. Regular meetings, dharnas, marches, seminars, conferences and yatras should be organised by involving all segments of society to promote communal harmony and amity.

Terrorism

While AIMMM condemns all kinds of terrorism, it wishes to register that certain incidents like the Burdwan blast of last October and the alleged joining of ISIS ranks by a few Indian Muslim youth, are being used to revive a situation which prevailed during the previous NDA rule when Muslim youth were being arrested on mere suspicion and kept in jails for years. This is still continuing despite the fact that hundreds of such youth have now been honourably acquitted after spending many years behind bars. This policy will only serve the opposite by pushing Muslim youth to the path of militancy, which must not be the aim of any law-abiding and sincere government.

Nanavati Commission

The AIMMM takes note of the Nanavati-Shah-Mehta Commission which twelve years after its formation and after costing the public exchequer crores of rupees, presented its report on 19 November on the expected lines by exonerating the then chief minister who was the main planner of the Gujarat 2002 riots and later protected the rioters. The Commission included Judge Akshay Mehta whose exploits include granting bail to the mass-murderer Babu Bajrangi. The 2000-page report was a sheer waste of public money and will never wash the crimes of the 2002 riot planners and executioners. Justice remains to be done to the victims of that ghastly pogrom which polarized Gujarat on communal lines and made possible BJP’s electoral win in subsequent elections.

Kashmir floods

AIMMM registers its pain that both state and Central governments let down the victims of the worst floods in Kashmir’s recent history. Government is largely absent from the post-flood rehabilitation, rebuilding and repairing of lakhs of houses, shops and commercial establishments. AIMMM exhorts both the state and Central governments to show seriousness and sense of accountability in dealing with this huge task which people cannot undertake on their own. AIMMM also appeals to the Union government to allow foreign relief agencies to enter the Valley to provide the much-needed rehabilitation and re-construction help.

J&K elections

J&K state, still reeling from a long spell of militancy, is a delicate place where BJP has seen it fit to introduce its divisive policies, pitting regions and communities against each other and using money and deceit to win enough seats in the state assembly with a view to extend its Hindutva agenda to this Muslim-majority state.  AIMMM is relieved that the Kashmiri voters understood the game and came out in large numbers to frustrate the BJP/RSS agenda. AIMMM cautions the BJP leadership to desist from its childish plays and to save the country from a fresh bout of militancy in that delicate state.

Darul Musannefin

AIMMM pays tribute to the Darul Musannifin Shibli Academy of Azamgarh which has just held its centenary celebrations after a century-long literary and research activity. AIMMM lauds Allama Shibli Nomani and his lieutenants, like Maulana Syed Sulaiman Nadwi, who sacrificed and laid the foundations of a research institution to serve the needs of the Muslim community in the Subcontinent. The institution has dutifully taken up the challenges thrown up by historical revisionism and attacks on Islam and Muslims.

Peshawar Terrorist attack

The AIMMM is pained by the level of terrorist carnage some so-called “mujahids” in Pakistan stooped to by attacking a school and killing about 145 persons, mostly young children. AIMMM reiterates that misguided organisations are only misusing the pristine name of Islam to unleash a terrorist agenda with the help of the enemies of Islam. AIMMM also cautions states, Muslim and non-Muslim, to desist from using terror as state policy and to stop supporting dubious organisations in order to serve their plans to plunder the resources of other nations. Every case of state-supported terrorism has only boomeranged on its supporters.

OBITUARIES

NAFE'Y QIDWAI, senior Urdu journalist, died in Lucknow on 14 October at the age of about 57 years; SIBTE AHMAD QAMAR RIZVI JAAESI, noted litterateur, died on 18 October in Aligarh; KHWAJA ABDUL GHANI GONI, NCP leader of Jammu, former minister, speaker of J&K Assembly, MP and India's ambassador to Sudan, died on 16 September in Government Medical College; Prof. GHULAM AZAM of Bangladesh, who died at the age of 92 years on 23 October while serving a politically motivated conviction for alleged "war crimes" in East Pakistan; SAMI KHATEEB, former chairman of Mumbai's famous educational institution Anjuman-e Islam, a prominent industrialist and chairman of a pharmaceutical company, died of heart attack on 18 November in Mumbai at the age of 80 years; ABDUR RAHMAN ANTULAY, veteran Congress leader who was the first-ever Muslim chief minister of Maharashtra and subsequently a Union minster, died of kidney failure in Mumbai on 2 December at the age of 85 years; SYED MUHAMMAD ALI KAZMI, former Advocate General of UP and former Chairman of UP Minorities Commission died in a road accident near Pratapgarh on 25 November at the age of around 60; SYED MUHAMMAD UMAR KALIMI HASANI HUSAINI, noted religious scholar, exegesist who helped in setting up many mosques, madrasas and other educational institutions named after him died in Chennai on 24 November, and TAHIR ABBAS, noted Urdu journalist who died on 19 December.

Released by on 20 December 2014 by
ALL INDIA MUSLIM MAJLIS-E-MUSHAWARAT
 [Umbrella body of the Indian Muslim organisations]
D-250, Abul Fazal Enclave, Jamia Nagar
New Delhi-110025 India
Tel.: 011-26946780, 9990366660 Fax: 011-26947346
Email: mushawarat@mushawarat.com  Web: www.mushawarat.com
 
Urdu
 

 

	مشاورت کی مرکزی کمیٹی کے اجلاس میں
	ملی ،قومی اوربین ا لاقوامی مسائل پر غوروخوض
	نئی دہلی :ہندوستانی مسلم تنظیموں کی وفاق آل انڈیامسلم مجلس مشاورت کیمرکزی مجلس کی میٹنگ20دسمبر2014کومنعقدہوئی ۔اس سال مرکزی مجلس کی یہ دوسریاورآخری میٹنگ تھی ۔میٹنگ میں ملی ،قومی اورعالمی مسائل وایشوزپر غوروخوضہوا۔مجلس کے ارکان نے ملک کے مابعدانتخابات سیاسی منظرنامہ میں مشاورت کےموقف پر اورکئی ریاستوں میں مشاورت کی اکائیوں کے احیاء کے لیے اٹھائے گئےاقدامات پر بحث وگفتگوکی ۔ارکان نے اس بات پر اطمیئنان ظاہرکیاکہ یوپی،مغربی بنگال ،تامل ناڈو،دہلی اورگجرات میں مشاورت کی اکائیوں کودوبارہفعال بنا لیا گیاہے اوراب نئی سیاسی فضاکے پیداکردہ چیلنجوں کا سامناکرنےکے لیے یہ اکائیاں اچھی طرح سرگرم عمل ہیں۔
	اجلاس نے گزشتہ عام انتخابات میں بی جے پی کی جیت کے بعدملک میں بڑھتی ہوئیفرقہ واریت پر تشویش کا اظہارکیااورخبردارکیاکہ مختلف محاذوں پرہندوتوکےعناصرکی سرگرمیاں ہمارے دستوروقانون کی خلاف ورزی ہیں،اوران کے نتیجہ میںہمارے سیاسی نظام کا سیکولرڈھانچہ ڈھ کررہ جائے گااورملک میں خانہ جنگی کیسی فضاپیداہوجائے گی،جس کے لیے موجودہ حکومت اوراس کا سربراہ اعلی ہیتنہاذمہ دارہوں گے ۔ایک دوسری قراردادمیں اجلاس نے تمام امنپسندہندوستانیوں اورخاص کرمسلمانوں سے اپیل کی کہ وہ فرقہ وارانہ ہم آہنگیاورامن وامان کے لیے سخت جدوجہدکریں،خاص طورپر بھائی چارہ کوفروغ دینے کےلیے اورنفرت کی آگ بھڑکانے والوں کے منصوبوں کو ناکام بنانے کے لیے تمامعلاقوں میں امن کمیٹیاں بناکرکام کریں۔اجلاس نے ہرطرح کے تشددکی مذمت کیاورپشاورکے اسکول پر حالیہ دہشت گردانہ حملے کے متاثرین کوخراج عقیدت پیشکیا،اورمسلم وغیرمسلم سبھی ملکوں کوخبردارکیاکہ وہ دہشت گردی کوبطورپالیسیکے استعمال نہ کریں اوردوسرے ملکوں کے وسائل پر قبضہ کرنے کے لیے مشکوکتنظیموں کی حمایت کرناچھوڑدیں کیونکہ جہاں جہاں بھی ریاست نے دہشت گردیکوبڑھاوادیاہے وہاں دہشت گردوں نے پلٹ کر ریاست پر حملہ کیا ہے۔ ایک دوسریقراردادمیں کہاگیاہے کہ مرکزاورریاست جموں کشمیردونوں حکومتوں نے کشمیرکیحالیہ تاریخ کے سب سے بدترین سیلاب کے متاثرین کوفراموش کردیاہے۔ مشاورتدونوں حکومتوں پر زوردیتی ہے کہ اس بڑے فرض سے نمٹنے کے لیے سنجیدگیدکھائیں اورجواب دہی کا مظاہرہ کریں۔آل انڈیامسلم مجلس مشاورت مرکزی حکومتسے اپیل کرتی ہے کہ بیرونی ریلیف ایجنسیوں کووادی میں داخل ہونے کی اجازتدے تاکہ وہ بازآبادکاری اورتعمیرنومیں مدددے سکیں جس کی بہت زیادہ ضرورت ہے۔اجلاس میں ان مسلم شخصیات کوبھی یادکیاگیاجوگزشتہ اجلاس کےبعددنیاکوخیربادکہہ گئے۔ ان میں تجربہ کارکانگریس لیڈرعبدالرحمن انتولے ،جن کا 2دسمبرکوانتقال ہوگیا،اوریوپی کے سابق ایڈوکیٹ جنرل اورسابق چیرمینیوپی اقلیتی کمیشن سیدمحمدعلی کاظمی شامل ہیں جن کا انتقال 25نومبرکوہوا۔اجلاس مشاورت کے قومی صدرڈاکٹرظفرالاسلام خان کی صدارت میں منعقدہوا۔اسمیں امیرجماعت اسلامی ہندمولاناسیدجلال الدین عمری ،جناب سیدشہاب الدین،جناب محمدجعفر،حافظ رشید احمدچودھری (مشاورت کے نائب صدور) پروفیسرمحمدسلیمان،مفتی عطاء الرحمن قاسمی ،جناب معصوم مرادابادیاورڈاکٹرسیدقاسم رسول الیاس(مشاورت کے جنرل سیکریٹریز)،جناب نصرت علی ،جنابکمال فاروقی ،پروفیسرشکیل صمدانی ،جناب عبدالرشیداگوان ،جنابمحمداحمد،جناب شفیع مدنی ،انجینئرمحمدسلیم ،جناب راشداحمدخان آئی اے ایس(رٹائرڈ)،جناب ایس ایم وائی ندیم ،جناب عبدالخالق ،جناب عبدالرحمنکوندو (جموں وکشمیر)جناب اقبال بیگ مرزا(گجرات )،جناب مجتبیفاروق،ڈاکٹرانوارالاسلام خاں اورڈاکٹرسیداحمدخان نے شرکت کی ۔
	آل انڈیامسلم مجلس مشاورت کی مرکزی مجلس کی پا س کردہ قراردادوں کا مکمل متن درج ذیل ہے:
	قراردادیں:
	فرقہ واریت: آل انڈیامسلم مجلس مشاورت یہ دیکھ کرمضطرب ہے کہ آرایس ایس اوربی جے پی اوران سے جڑی ہوئی تنظیموں کے لیڈران اپنے تفریق پسندہندوتوایجنڈے کوبےمہارکرکے ہندوستانی معاشرہ کوتقسیم کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔روزانہ چھوٹےچھوٹے فرقہ وارانہ حادثات ہورہے ہیں۔پرانی ’’شدھی تحریک‘‘ کو’’گھرواپسی‘‘ کانام دیکردوبارہ زندہ کیاجارہاہے ۔پوری سنجیدگی سے تاریخ کا کیسریاکرنکیاجارہاہے ۔وہ باتیں جن کواب تک سوچابھی نہیںجاسکتاتھامثلا’’غیربھارتی‘‘اقلیتوں کوہندوستان سے بھگادینا ، یا2021تکہندوستان کوایک ہندوملک بنادینا وغیرہ جیسی آوازیںآج دھڑلے سے اٹھ رہیہیں۔یہ سب کچھ ہورہاہے اورمرکزی حکومت اوراس کے سربراہ نے جان بوجھکرخاموشی اختیارکررکھی ہے ۔آل انڈیامسلم مجلس مشاورت کا مانناہے کہ انلوگوں نے بڑی چالاکی سے کام کوتقسیم کررکھاہے کہ بی جے پی ’’ڈیولپمنٹ ‘‘کیبات کرے گی اوراس کے اتحادی آرایس ایس اورہندومہاسبھاکے پرانے منصوبے پورےکرنے کے لیے فسادمچائیں گے ۔آل انڈیامسلم مجلس مشاورت آگاہ کرتی ہے کہہندتوکے علمبرداروں کی یہ کوششیں ہمارے دستوراورقانون کے خلاف ہیں اوران کےنتیجہ میں ہمارے سیاسی نظام کا سیکولرڈھانچہ ڈھ کررہ جائے گااورملک میںخانہ جنگی کی فضاپیداہوجائے گی ،جس کے لیے موجودہ حکومت اوراس کا سربراہاعلی دونوں ذمہ دارہوں گے۔
	 
	یکساں سول کوڈ:مرکزکی نئی حکومت کے حامی ایک بارپھرمتنازعہ یکساں سولکوڈکے ایشوکواٹھارہے ہیں۔یکساں سول کوڈ کے حامی پہلے مجوزہ کوڈ کے خط وخالپر اتفاق کرلیں پھراس کا ڈرافٹ سامنے لیکرآئیں اس کے بعدہی کوئی مناظرہکریں۔اوراس سے بھی پہلے ایک یکساں معاشی کوڈ لایاجائے جوانکم ٹیکس کےمعاملات میں سب کے ساتھ یکساں برتاؤکرے اوراس غیرآئینی اورغیرقانونی نفرتانگیزروایت کوختم کیاجائے جس کو’’غیرمنقسم ہندوخاندان‘‘ (HUF)کہتے ہیں جسکے ذریعے ملک بھرمیں لاکھوں ہندوخاندانوں کوٹیکس دینے سے بچالیاجاتاہےاوروہ ہرسال کھربوں روپے کا ٹیکس ادانہیں کرتے ۔ اس ایچ یوایف کومکمل طورپرختم کردیناچاہیے یااس اسکیم کوبغیرکسی مذہبی تفریق کے سارے ہندوستانیوں کےلئے عام کرناچاہیے۔
	فرقہ وارانہ ہم آہنگی :اپنے آغازسے ہی آل انڈیامسلم مجلس مشاور ت کاجوپیغام رہاہے اس کودہراتے ہوئے مشاورت تما م امن پسندہندوستانیوں اورخاصکرمسلمانوں سے اپیل کرتی ہے کہ وہ فرقہ وارانہ ہم آہنگی اورامن وامان کےلیے سخت محنت کریں،تمام علاقوں میں امن کمیٹیاں بناکرکام کریں تاکہ بھائیچارہ کوفروغ دے سکیں اورنفرت کی آگ لگانے والوں کوناکام بنادیں۔باضابطہمیٹنگیں،دھرنے ،مارچ، سیمینار اور کانفرنسیں کی جائیں اوریاترائیں نکالیجائیں جن میں سماج کے سارے طبقات شریک ہوں اوریوں فرقہ وارانہ ہم آہنگیاورامن وامان کوفروغ دیاجائے۔
	 
	دہشت گردی : آل انڈیامسلم مجلس مشاورت دہشت گردی کی تمام صورتوں کی مذمتکرتے ہوئے اپنایہ احساس درج کراناچاہتی ہے کہ بعض حادثات جیسے گزشتہاکتوبرکوبردوان دھماکہ اورمبینہ طورپرچند ہندوستانی مسلمان نوجوانوں کی آئیایس آئی ایس (داعش )کی صفوں میں شمولیت کو سابقہ این ڈی اے کی حکمرانی کےدوران قائم صورت حال کودوبارہ لانے کے لیے پیداکیاجارہاہے،جب مسلم نوجوانوںکومحض شک وشبہ کی بنیادپر پکڑاجارہاتھااوران کوسالوں سال کے لیے جیل میںڈالاجارہاتھا۔یہ سلسلہ ابھی بھی جاری ہے ،حالانکہ سیکڑوں نوجوان کئی سالجیلوں میں کاٹنے کے بعدعدالت سے باعزت بری ہوچکے ہیں۔یہ پالیسی محضالٹانتیجہ پیداکرکے مسلم نوجوانوں کوعسکریت کے راستہ پر ڈال دے گی جوکہ کسیبھی سنجیدہ اورقانون کی پابندحکومت کا مقصدنہیں ہوناچاہیے۔
	ناناوتی کمیشن:آل انڈیامسلم مجلس مشاورت نے ناناوتی۔ شاہ۔ مہتاکمیشن کا بھینوٹس لیاجس نے اپنی تشکیل کے بارہ سال بعدعوام کے خزانے سے کروڑوں روپےخرچ کرکے پچھلے 19نومبرکواپنی رپورٹ متوقع خطوط پرپیش کردی،۔یعنی اس وقت کےوزیراعلی کو،جو2002کے گجرات فسادات کے سب سے بڑے منصوبہ ساز تھے اوربعدمیںجنہوں نے فسادیوں کوتحفظ دیا،ان کے جرائم سے بری کردیا۔ کمیشن میں جج اکشےمہتاشامل تھے جن کے اپنے اختیارات کے غلط استعمال میں یہ بھیشامل ہے کہانہوں نے بابوبجرنگی جیسے قتل عام کے ملزم کوبری کردیا تھا۔انکی 2000صفحاتکی رپورٹ عوام کی دولت کا محض ضیاع ہے ۔اس سے 2002کے فسادکے منصوبہسازاوراس کوعملی جامہ پہنانے والوں کے جرائم کبھی دھل نہیں سکیں گے ۔اسخوفناک قتل عام کے متاثرین کے ساتھ انصاف نہیں کیاجاسکا،جس نے گجرات کوفرقہوارانہ خطوط پر تقسیم کردیااوربعدکے انتخابات میں بی جے پی کے لیے الیکشنجیتناممکن بنادیا۔
	کشمیرکا سیلاب: آل انڈیامسلم مجلس مشاورت بڑے دکھ کے ساتھ یہ نوٹ کرتی ہےکہ مرکز اورریاست جموں کشمیردونوں حکومتوں نے کشمیرکی حالیہ تاریخ کے سب سےبدترین سیلاب کے متاثرین کے حق کو نہیں ادا کیا ۔سیلاب کے بعدبازآبادکاریکے کاموں سے حکومت تقریباغائب ہے جن میں لاکھوں مکانات ، دکانوں اورتجارتیعمارتوں کی مرمت یا تعمیرنو شامل ہے ۔مشاورت دونوں حکومتوں پر زوردیتی ہےکہ اس بڑے فرض سے، جس کولوگ اپنے طورپرادا نہیں کرسکتے ہیں، نمٹنے کے لیےسنجیدگی دکھائیں اورجواب دہی کا مظاہرہ کریں۔آل انڈیامسلم مجلس مشاورتمرکزی حکومت سے یہ بھی اپیل کرتی ہے کہ بیرونی ریلیف ایجنسیوں کووادی میںداخل ہونے کی اجازت دے تاکہ وہ بازآبادکاری اورتعمیرنومیں مدددے سکیں جس کیبہت زیادہ ضرورت ہے۔
	جموں وکشمیرالیکشن: ریاست جموں وکشمیرابھی تک عسکریت پسندی سے جوجھ رہیہے۔ایسی نازک جگہ میں بھی بی جے پی اپنی تفریقی پالیسیاں بروئے کارلارہیہے۔وہاں علاقوں کواورلوگوں کوایک دوسرے کے خلاف کھڑاکررہی ہے۔ریاست کیاسمبلی میں کافی سیٹیں جیتنے کےلیے دولت اورفریب کواستعمال کررہی ہےاورنظراس پر ہے کہ اس مسلم اکثریتی ریاست میں بھی اپناہندتوایجنڈاپھیلادے۔آل انڈیامسلم مجلس مشاورت اس بات پر راحت کا سانس لیتی ہے کہ کشمیریووٹروں نے اس کے کھیل کوسمجھ لیا اوربی جے پی اورآرایس ایس کوناکام کرنے کےلیے بڑی تعدادمیں نکل کرآئے ۔مشاورت بی جے پی قیادت کوآگاہ کرتی ہے کہ وہبچکانہ حرکتوں سے باز آئے اورملک کو اس حساس ریاست میں عسکریت کے دوبارہزندہ ہونے سے بچائے ۔
	دارالمصنفین :آل انڈیامسلم مجلس مشاورت اعظم گڑھ کے دارالمصنفین شبلیاکیڈمی کوخراج عقیدت پیش کرتی ہے،جس کی علمی خدمات کے سوسال پورے ہورہے ہیںاورجس نے حال ہی میں اپنی صدی تقریبات منائیں ۔مشاورت علامہ شبلی نعمانیاوران کے جانشینوں مثلامولاناسیدسلیمان ندوی کوخراج عقیدت پیش کرتیہے،جنہوں نے قربانیاں دیں اورتحقیق وریسرچ کے اس مرکز کی تاسیس کی تاکہبرصغیرکی ملت اسلامیہ کی ضرورتیں پوری ہوسکیں۔اس ادارہ نے بحسن وخوبی انچیلنجوں کوقبول کیاجوتاریخ کو مسنح کرنے کی کوششوں اوراسلام اورمسلمانوںپرحملوں نے پیداکیے۔
	پشاوردہشت گردانہ حملہ:آل انڈیامسلم مجلس مشاورت اپنی تکلیف کا اظہارکرتیہے کہ پاکستان میں بزعم خودبعض ’’مجاہد‘‘گروپ اپنی دہشت گردی میں اس حدتکگرگئے کہ انہوں نے اسکول پر حملہ کیااورتقریبا145لوگوں کوقتل کردیاجن میںزیادہ ترکم سن بچے تھے۔مشاورت پھردہراتی ہے کہ گمراہ تنظیمیں اسلام کا ناممسلمانوں میں ہی سے کچھ عناصرکو اپنے دہشت گردی کے ایجنڈے کوپوراکرنے کےلیے استعما ل کررہی ہے ۔مشاورت مسلم وغیرمسلم سبھی ملکوں کوخبردارکرتی ہےکہ وہ دہشت گردی کوبطورپالیسی کے استعمال نہ کریں اوردوسرے ملکوں کے وسائلکو لوٹنے کے لیے مشکوک تنظیموں کی حمایت کرناچھوڑدیں،کیونکہ جہاں جہاں بھیریاست نے دہشت گردی کوبڑھاوادیاہے وہاں دہشت گردوں نے پلٹ کر ایسی ریاستوںپر حملہ کیا ہے۔
	وفیات :سینئراردوصحافی نافع قدوائی 14اکتوبر لکھنؤمیں 57سال کی عمرمیںرحلت کرگئے ،معروف ادیب سبط احمدقمررضوی جائسی 18اکتوبرکوعلی گڑھ میں رحلتکرگئے ۔سابق وزیر،اسپیکرآف جموں وکشمیراسمبلی ،ایم پی اورسوڈان میں بھارتکے سابق سفیراورجموں سے نیشنل کانگریس پارٹی کے قائدخواجہ عبدالغنی گونی16ستمبرکوگورنمنٹ میڈیکل کالج میں انتقال کرگئے ۔بنگلہ دیش کے پروفیسرغلاماعظم 92سال کی عمرمیں 29اکتوبرکووفات پاگئے ۔وہ سیاسی محرکات کے تحت مشرقیپاکستان میں مبینہ جنگی جرائم کے ایک مقدمہ کی سزا کاٹ رہے تھے۔ممبئی کےمشہورتعلیمی ادارہ انجمن اسلام کے سابق چیرمین اورمعروف صنعت کارسمیع خطیب18نومبرکوبعمر80سال ہارٹ اٹیک سے وفات پاگئے ۔کانگریس کے تجربہ کارلیڈراورمہاراشٹرکے واحدمسلم وزیراعلی اوراس کے بعدیونین منسٹررہنے والےعبدالرحمن انتولے 2دسمبرکو85سال کی عمرمیں گردہ فیل ہوجانے سے ممبئی میںانتقال کرگئے۔یوپی کے سابق ایڈوکیٹ جنرل اورسابق چیرمین یوپی اقلیتی کمیشنسیدمحمدعلی کاظمی 25نومبرکوتقریبا60سال کی عمرمیں پرتاپ گڑھ میں ایک سڑکحادثہ میں رحلت کرگئے ۔اورمعروف مذہبی اسکالرومفسرسیدمحمدعمرکلیمی حسنیحسینی نے،جنہوں نے بہت سی مساجد،مدرسے اورتعلیمی ادارے کھولے،24نومبرکوچنئی میں دنیاکوخیربادکہہ دیااورمعروف اردوصحافی طاہرعباس جو19دسمبرکو دنیاسے رخصت ہوگئے ۔)ختم

 

We hope you liked this report/article. The Milli Gazette is a free and independent readers-supported media organisation. To support it, please contribute generously. Click here or email us at sales@milligazette.com

blog comments powered by Disqus