Press Statements

Telangana encounter killing: Mushawarat demands high-level judicial probe

New Delhi, 8 April, 2015: “This is a calculated conspiracy to push the Muslim youth on the path of extremism and terrorism,” said Dr. Zafarul-Islam Khan, President of the All India Muslim Majlis-e Mushawarat, the apex body of Indian Muslim organisations while commenting on the calculated murder of five alleged “SIMI” activists in Nalgonda, Telangana, on 7 April while in judicial custody, handcuffed and surrounded by an overwhelming police force.

Dr. Khan said this is a calculated murder by security forces which are hell-bent to keep the country boiling. Dr. Khan said, while the political bosses of the NDA government claim that the Indian Muslim community is immune to terrorism, the NSA, IB and other security agencies work in tandem to push Muslim youth to extremism and terrorism. Dr. Khan said Telangana police is the same which earlier framed many Muslim youth and had killed protesters when they came out against the Makkah Masjid blast.

Dr. Khan demanded a high-level judicial enquiry into the murder of the five alleged “SIMI” activists and the murder of two other alleged “SIMI” activists only three days earlier in the same state.

Dr. Khan said this is another Batla House kind of fake encounter perpetrated by the security agencies at the behest of their political masters. Dr. Khan said if we fail to get justice, we will start approaching international human rights organisations like the UN and EU human rights panels and others to ensure justice to the victims of state terror.

تلنگانہ انکاؤنٹر قتل: مشاورت نے اعلی عدالتی تحقیق اور مجرمین کو سزا کا مطالبہ کیا


نئی دلی، ۱۸ اپریل ۲۰۱۵: ’’یہ ایک سوچی سمجھی سازش مسلم نوجوانوں کو شدتپسندی اور دہشت گردی کی طرف دھکیلنے کی ہے‘‘۔ تلنگانہ میں ایک روز قبل پانچمبینہ ’’سیمی‘‘ ملزمین کے پولیس کے ہاتھوں عدالتی تحویل کے دورانقتل پرتبصرہ کرتے ہوئے مسلم تنظیموں کے وفاق آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت کے صدرڈاکٹر ظفرالاسلام خان نے آج یہاں ایک صحافتی بیان میں کہا۔


ڈاکٹر ظفرالاسلام خان نے کہا کہ سیکیورٹی فورسز کے ہاتھوں یہ قتل دہشت گردیکے افسانے کو باقی رکھنے کے لئے ہے۔ ڈاکٹر ظفرالاسلام خان نے کہا کہ جبکہاین ڈی اے کے سیاسی حکمراں یہ کہہ رہے ہیں کہ مسلم سماج دہشت گردی سے پاکہے، نیشنل سیکیورٹی ایڈوائزر، آئی بی اور دوسری ایجنسیاں ملکر مسلماننوجوانوں کو دہشت گردی کے راستے پر دھکیلنے کی پالیسی پر کاربند ہیں۔ انھوںنے کہا کہ یہ قتل عمد اُسی پولیس فورس کے ہاتھوں ہواہے جس نے درجنوںنوجوانوں کو دہشت گردی کے جھوٹے واقعات میں ملوث کیا تھا اور مکہ مسجدبلاسٹ کے خلاف مظاہرہ کرنے والوں کو گولی مارکر شہید کیا تھا۔



ڈاکٹر ظفرالاسلام نے مبنیہ ’’سیمی‘‘ نوجوانوں کے قتل کی اعلی عدالتی تحقیقاور قتل کے مجرمین کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہ کیا ۔ انھوں نے کہا کہصرف تین روز قبل اسی ریاست میں دو مزید مبنیہ ’’سیمی‘‘ نوجوانوں کو قتلکیا گیا تھا۔ ڈاکٹر ظفرالاسلام نے کہا کہ کل کا واقعہ بٹلہ ہاؤس جیسا ایکاور جھوٹا انکاؤنٹر ہے جس کو ایجنسیوں نے اپنے سیاسی آقاؤں کے اشارے پرانجام دیا ہے۔


ڈاکٹر ظفرالاسلام نے مزید کہا کہ اگر ہمیں ہندوستان میں انصاف نہیں ملتا ہےتو ہم اب بین الاقوامی حقوق انسانی کے اداروں بشمول اقوام متحدہ و یوروپینیونین کا دروازہ کھٹکھٹائیں گے تاکہ ریاستی دہشت گردی سے ہم کو نجات ملسکے۔

(ختم)

 

 

Issued at New Delhi on 8 April 2015 by
 -------------------------------------------------------
ALL INDIA MUSLIM MAJLIS-E-MUSHAWARAT
[Umbrella body of the Indian Muslim organisations]
D-250, Abul Fazal Enclave, Jamia Nagar, New Delhi-110025  India
Tel.: 011-26946780  Fax: 011-26947346

Email: mushawarat@mushawarat.com   Web: www.mushawarat.com  Photos: flickr/images

We hope you liked this report/article. The Milli Gazette is a free and independent readers-supported media organisation. To support it, please contribute generously. Click here or email us at sales@milligazette.com

blog comments powered by Disqus