Press Statements

Mushawarat Working Committee deliberates on national and international issues

Citizenship to non-Muslims of Pakistan and Bangladesh; ISIS; IM; Bihar elections, Meat ban, freedom; Punishment to the killers of Akhlaq; Murders in the Kashmir valley; AFPSA and PSA; Dislodging lakhs of Muslim Gujjars and Bakerwals; Kashmir Floods; Attacks on Dalits and Adivasis; Muslim population; To allow regular prayers in all “protected” mosques; Azim Premji’s philanthropy; Jamaat’s communal harmony drive; Shoulder2Shoulder joint congregational prayers of the followers of the Shia and Sunni sects; Attempts to free Hindutva terrorists now in jails; Impending Israel visits of the President and Prime Minister; Syria; Yemen

New Delhi, 6 October, 2015: The Working Committee (Majlis-e Amla) of the All India Muslim Majlis-e Mushawarat (AIMMM), the apex body of Indian Muslim organisations, met here on Saturday, 3 October at the AIMMM’s central office. Members of the working committee as well as some general body members living in and around Delhi participated in the meeting chaired by the AIMMM president Dr Zafarul-Islam Khan. Participants included Janab Mujtaba Farooq, Vice President, Prof. Mohammad Sulaiman, Mufti Ataur Rahman Qasmi andJanab Masoom Moradabadi, General Secretaries, Janab Syed Shahabuddin, Gp. Capt. (retd) M. Anwar, Janab Sikandar Hayat Khan, Janab Mohammad Adeeb, ex-MP, Janab Anees Durrani, Dr. Javed Jameel, Janab Syed Samar Hamid, Janab Amanullah Khan, Janab Syyed Mansoor Agha, Janab SMY Nadeem, Dr. Basir Ahmad Khan, Janab Rahat Mahmood Chaudhary, Janab Mohammad Ilyas Malik, Dr. Anwarul Islam Khan, Janab Mohammad Ahmad, Janab A. R. Agwan, Prof. Shakeel Ahmad, Janab Navaid Hamid, Janab Shaikh Manzoor Ahmad, Dr. Masood Ahamd, Janab Shah Faisal, Dr. Syed Ahmad Khan, Janab Khawja M. Shahid (VC, MAANU) and Maulana Junaid Ahmad Banarasi. Janab Shamail Nabi (President, AIMMM Bihar state unit) and Janab Mohammad Khalid (Lucknow) participated as special invitees.

The AIMMM discussed organisational, milli, national and international issues. Members expressed their satisfaction with the arrangements for and results achieved by the AIMMM golden jubilee held at the end of last month and inaugurated by the Vice President of India, Janab M. Hamid Ansari. They expressed their happiness that the golden jubilee and the Vice President of India’s address have started a discussion all over the country about AIMMM and the issues of the Muslim community. The meeting discussed arrangements for the next elections of AIMMM, the situation prevailing in the country and took notice, in particular, of the growing fascism and communalism.

A number of resolutions were passed by the working committee on national and international issues affecting the Muslim community. AIMMM took notice of the growing communalism, politics in the name beef and meat, attacks on innocent people’s lives and properties, saffronisation of history and textbooks. AIMMM said the BJP government’s decision to offer citizenship and visa relaxations to "non-Muslims", i.e., Hindus, from Pakistan and Bangladesh is a violation of India’s secularism and demanded that if Hindus in Pakistan and Bangladesh are facing any problem, it should be addressed in the framework of Nehru-Liaqat Pact which gives each country the right to intervene if minorities are threatened in the other country.

The AIMMM working committee rejected the claims that ISIS is making inroads into India or that Indian Muslim youth are taking interest in ISIS ideology and said that these reports are highly exaggerated and lack any credible evidence. AIMMM said that it believes that ground is being readied for a new wave of arrests of Muslim youth in the name of “ISIS” now that “IM” myth has met it own natural death.

On Bihar elections, AIMMM said these elections are very crucial for the future of democracy and secularism in our country and advised voters that every effort should be made to ensure the success of secular and clean-image candidates.

Another resolution observed that the meat politics has taken a new and ugly turn since BJP came to power at the Centre and now the whole bovine family is being banned and all meat is being banned on certain days and in certain areas. AIMMM observed that there should be freedom to everyone to eat the food of his choice. Demanding punishment to the killers of Akhlaq in a Dadri village, AIMMM also demanded the suspension of the Dadri SDM who has threatened Akhlaq’s family and ordered it not to speak against BJP. The AIMMM also demanded the dismissal of the Union culture minister who has described Akhlaq’s lynching as a mere "accident".

Another resolution expressed anguish over the murder of at least 12 persons, including a young child, in recent months by mysterious killers in the Kashmir valley, especially in and around Sopore. The resolution said that these mysterious murders are an implementation of the policy announced by the Union defence minister that he will use terrorists to kill terrorists.  

Another resolution demanded the prosecution of army and police officers responsible for the murders of Kashmiri civilians and the removal of the black AFPSA and PSA from Kashmir.

The AIMMM also took note of the attempts of J&K government to dislodge lakhs of Muslim Gujjars and Bakerwals who have been traditionally living in forest areas since ages and demanded the application of the Forest Rights Act of 2006, which protects forest-dwellers and develops their areas, to the J&K which remains the only state in India where this law is not applied.

AIMMM observed that over a year has passed on the horrible floods which affected hundreds of thousands of people in the Valley of Kashmir. Central and state governments have so far only dished out promises and laughable amounts as “compensation” to tens of thousand of affected people who lost their houses and shops. AIMMM exhorted both the state and Central governments to hasten to help the hapless victims to rebuild/repair their houses and shops in order to start a new life.

AIMMM condemned the continuing attacks on Dalits and Adivasis which have increased since the Modi government took charge. It mentioned the Dalits of Bhagana in BJP-ruled Haryana who are so much persecuted that they are sitting in protest since months at the Jantar Mantar in Delhi against the injustices meted out by upper caste people.

AIMMM rejected the propaganda about the increase in Muslim population and said that the fact is that the decadal Muslim rate of population growth has come down from 29 percent in 2001 to 24 percent in 2011. The “facts” released by Modi government fail to take into account that some previous censuses did not take place in J&K and Assam and that the 1952 census was cooked up. AIMMM said that the reason behind the supposed Hindu decline is due to the female feticide and infanticide rampant in Hindu society.

AIMMM asked the Government of India and the Archeological Survey of India to allow regular prayers in all “protected” mosques which are now crumbling and used by criminals and anti-socials as well as for living, warehousing and trade. Denial of prayers in mosques is a grave injustice to the Muslim community, especially when prayers are not barred in historical places of worship of other religions. Regular prayers will ensure cleanliness as well as timely repairs by the Muslim community.

AIMMM lauded industrialist Azim Premji’s path-breaking act of setting aside 18 percent of his stake in Wipro for charity and encouraged Muslim industrialists and businessmen to follow suit.

AIMMM welcomed Jamaat-e Islami Hind’s communal harmony drive and asked all Muslim organisations to work for the betterment of relations and to enhance contacts with other communities, especially Hindus who are being misled by hatemongers of Hindutva forces through lies and distortion of history. AIMMM observed that better Hindu-Muslim relations and understanding is the antidote of the Hindutva venom.

AIMMM lauded and supported the initiative of the Shia organisation, Shoulder2Shoulder to organise joint congregational prayers of the followers of the Shia and Sunni sects. This initiative started in Delhi last July with AIMMM support when Eidul Fitr was prayed together at the Jamia Millia mosque. Now, joint Eidul Azha prayers were performed in Lucknow’s historic Sibtainabad Imambara. AIMMM supports such initiatives and calls for more social interaction between the Shia and Sunnis of India as an appropriate response to the purveyors of hate at home and abroad.

AIMMM said about the attempts to free Hindutva terrorists now in jails and said that since the advent of Modi government, attempts are continuing to acquit Hindutva terrorists or at least release them on bail despite their committing umpteen terror attacks like Samjhauta Train, Malegaon, Ajmer Dargah and Makkah Masjid blasts. Special Prosecutor Rohini Salian has exposed the official pressure on her to go soft on Hindutva terrorists. AIMMM resolution said that convicts and accused in Gujarat pogrom of 2002 and umpteen fake encounters in Gujarat are being freed and even reinstated in their posts and criminals like Kodnani and Babu Bajrangi are out on bail. AIMMM said that this sends a wrong message, encourages criminals and demonstrates that Modi govt is hand-in-glove with terrorists and criminals of the Sangh Parivar. AIMMM observed that this line of BJP became clear at the way Jhabua blasts of 12 September were handled where the main accused is a BJP leader. But, instead of booking him under UAPA, he is facing charges of only illegal storage and trading in explosive materials. AIMMM demanded ban on all Hindutva terror organizations like Sanatan Sanstha, Hindu Yuva Vahini, Bajrang Dal etc.

AIMMM said in another resolution on the impending Israel visits of the President and Prime Minister that it is against the age-old Indian policy of supporting the wronged and occupied Palestinian people. The resolution condemned the growing Indo-Israel ties in the field of security and purchase of Israeli arms and defence services despite the continuing Israeli atrocities in the occupied Palestinian territories, Gaza Strip blockade and daily attempts to occupy the holy Aqsa mosque in Jerusalem and Israel’s continued occupation of Palestine and parts of the Syrian Golan Heights disregarding hundreds of UN resolutions. The resolution condemned the Israeli attempts to occupy the holy Aqsa mosque and warned that this may lead to a third Intifadah which will affect not only the occupied territories but the whole Middle East and Muslim World. The AIMMM said Israel is a danger to world peace and the forces supporting this artificial entity, especially the US, are entirely responsible for its blatant violations of international law and common decency.  

 A resolution about the refugees problem said that it is a direct result of the American and European policies in the Middle East. Millions of Afghan refugees still live in Pakistan and Iran, while millions of Iraqi and Syrian refugees are camping in neighbouring countries. They fled their homelands due to the American scheme to reshape the Middle East. Refugees became a “problem” only when they spilled over into Europe. AIMMM asked western powers to stop meddling in the Middle East and pave the way for the safe return of the refugees to their homelands.   

In a resolution about Syria, AIMMM said that this embattled country is now witnessing further escalation as a result of the Russian armed intervention to save the crumbling Assad regime. AIMMM said it supports Geneva I formula for a peaceful and democratic transition in Syria. A democratic and truly popular government will be able to deal with the terrorist monsters like ISIS and Al-Qaeda which are creations of American and Israeli intelligence agencies.  

A resolution on Yemen said foreign intervention in Yemen has complicated the tribal warfare in that unfortunate country. AIMMM called upon all parties to stop blood-letting, give peace a chance by accepting the UN mediator’s plan for a democratic change in that country through free and fair elections without foreign intervention by any side.

[end]

 


مسلم مجلس مشاورت کی مجلس عاملہ میں اہم قراردادیں پاس

نئی دلی، ۶اکتوبر ۲۰۱۵: مسلم تنظیموں کی وفاق مسلم مجلس مشاورت کی مجلسعاملہ نے پچھلے سنیچر کو یہاں صدر دفتر واقع ابولفضل انکلیو میں میٹنگمنعقدکی جسمیں بڑی تعداد میں عاملہ کے ارکان اور دلی کے آس پاس رہنے والےممبرانمرکزی مجلس نے شرکت کی۔ صدر مشاورت ڈاکٹر ظفرالاسلام خان کی صدارتمیں منعقدہونے والے اس اجلاس میں نائب صدر مشاورت جناب مجتبی فاروق، جنرلسکریٹریز پروفیسر محمد سلیمان، مفتی عطاء الرحمن قاسمی اور جناب معصوممرادآبادی ، جناب سید شہاب الدین، ایم۔ انور (گروپ کیپٹن ریٹائرڈ)، جنابسکندر حیات خان، جناب محمد ادیب (سابق ایم پی)، جناب انیس درانی، ڈاکٹرجاوید جمیل، جناب سید ثمر حامد، جناب امان اللہ خان، جناب سید منصور آغا،جناب ایس۔ایم۔ وائی ندیم، ڈاکٹر بصیر احمد خان،جناب راحت محمود چودھری،جناب محمد الیاس ملک، ڈاکٹر انوارالاسلام خان، جناب محمد احمد (سکریٹریجماعت اسلامی ہند)، پروفیسر شکیل احمد، جناب نوید حامد، جناب شیخ منظوراحمد، ڈاکٹر مسعود احمد، جناب شاہ فیصل، ڈاکٹر سید احمد خان، جناب خواجہمحمد شاہد (وائس چانسلر مولانا آزاد اردو یونیورسٹی) اور مولانا جنید احمدبنارسی نے شرکت کی۔ نیز مدعووین خصوصی کے طور پر جناب شمائل نبی (سابق وزیربہار) اور جناب محمد خالد (لکھنؤ) شریک ہوئے۔

اجلاس میں تنظیمی امور کے علاوہ ملکی اور بین الاقوامی مسائل پر بحث ہوئی۔حاضرین نے پچھلے دنوں مشاورت کے پچاس سالہ جشن کی کامیابی پر اطمئنان کااظہار کیا اور اس کی وجہ سے ملک میں مشاورت اور مسلم مسائل پر جو گفتگوشروع ہوئی ہے اس پر بھی خوشی کا اظہار کیا۔ اجلاس میں مشاورت کی اگلی میقاتکے لئے الیکشن پر بھی تبادلۂ خیال ہوا اور ملک کے اندر صورت حال پر گفتگوہوئی اور بالخصوص بڑھتی ہوئی فسطائیت اور فرقہ پرستی کے تئیں تشویش ظاہر کیگئی۔

اجلاس میں متعدد قراردادیں ملکی اور بین الاقوامی مسائل کے بارے میں پاسکی گئیں جن میں بڑھتی ہوئی فرقہ پرستی، گوشت کے نام پر سیاست اور بے قصوروںکی جان و مال پر حملے، تاریخ اور نصابی کتابوں کو بھگوارنگ میں رنگنے کیکوششوں، بی جے پی سرکار کے صرف بنگلادیشی اور پاکستانی ہندوؤں کو شہریتدینے اور ویزا میں نرمی برتنے کو سیکولرزم کی خلاف ورزی بتا یاگیا اورمطالبہ کیا گیا کہ ہندوپاکستان دوسرے ملک میں اقلیتوں میں ظلم کے بارے میںنہرولیاقت معاہدہ کے تحت کارروائی کریں۔

ایک اور قرارداد میں اجلاس نے ’’دولت اسلامیہ‘‘ نامی دہشت گرد تنظیم کےبارے میں سرکاری دعووں کی تردید کی کہ وہ ہندوستان میں جگہ بنارہی ہے ۔مشاورت نے اس پروپیگنڈا کو مسلم نوجوانوں کی آئندہ گرفتاریوں کے لئے تیاریقراردیا۔ اجلاس نے انکاؤنٹر قتل کے بارے میں بھی تشویش کا اظہار کیا۔

بہار کے الیکشن کے بارے میںمشاورتنے کہا کہ یہ الیکشن ہندوستان کیجمہوریت اورسیکولرزم کے لئے بہت اہم ہے کیونکہ کامیابی کی صورت میں فسطائیاور فرقہ پرست طاقتیں دوسرے صوبوں کی سرکاروں پر قبضہ کرنے کی مہم کو تیزکر دیں گی۔ قرارداد میں سیکولر اور صاف شبیہ کے امید واروں کوکامیاببنانے کا مشورہ دیا گیا۔

ایک اور قراردادمیں گوشت کی سیاست، گائے کے ذبیحہ کو پوری گائے کی فیملی پرلاگو کرنے، مختلف تہواروں پر اور بعض علاقوں میں گوشت پر پابندی لگانے پرتشویش کا اظہار کیا گیا اور دادری کے ایک گاؤں میں اخلاق نامی شخص کے محضشبہ کی بنیاد پر قتل کی سخت مذمت کی گئی اور مطالبہ کیا گیا کہ ہرہندوستانی کو اپنی خواہش کے مطابق کھانے پینے کی آزادی ہونی چاہئے۔ اخلاقکے قاتلوں کو سخت سزا دئے جانے کا مطالبہ کرتے ہوئے مشاورت نے مطالبہ کیاکہ دادری کے ایس ڈی ایم کو معطل کیا جائے کیونکہ اس نے اخلاق کے خاندان کوبی جے پی کے خلاف بولنے پر دھمکی دی ہے۔ قرارداد نے مرکزی وزیر ثقافت کوبھی برخاست کرنے کی مانگ کی جس نے کہاہے کہ اخلاق کا قتل محض ایک حادثہتھا ۔

ایک اور قرار داد میں کشمیر میں ہونے والی ہلاکتوں پر تشویش ظاہر کی گئیجس کے قاتل مجہول ہیں۔ پچھلے چند ماہ میں ایسے ۱۲قتل ہوئے ہیں۔ قراردادمیں کہا گیا کہ یہ قتل مرکزی وزیر درفاع کے اس بیان کی تعبیر ہیں جسمیںانھوں نے دہشت گردوں کے خلاف دہشت گردوں کو استعمال کرنے کی حمایت کی ہے۔ایک اور قرار داد میں کشمیر میں ہونے والے قتل کے واقعات کے ذمہ دار فوجیاور پولیس افسران کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا گیا اور افسپا اور پی ایساے جیسے کالے قوانین کو ہٹانے کی مانگ کی گئی۔جموں کے مسلم گوجروں اوربکروال لوگوں کو جنگلات سے نکالنے کی مذمت کی گئی جہان وہ صدیوں سے آبادہیں اور مطالبہ کیا گیا کہ حکومت ہند کے قانون برائے جنگلات (۲۰۰۶) کو جموںو کشمیر میں بھی نافذ کیا جائے۔

کشمیر میں سیلاب زدہ لوگوں کی حالت زارپرتبصرہ کرتے ہوئے مشاورت نے ایکقرارداد میں کہا کہ مرکزی اور صوبائی حکومت نے سیلابمتاثرین کو مضحکہ خیزامداد دی ہے جس کی وجہ سے اب بھی ہزاروں لوگ خیموں میں رہنے پر مجبور ہیں۔مشاورت نے مطالبہ کیا کہ مرکزی اور صوبائی حکومتوں کو جلد از جلد سیلاب کےمتاثرین کے گھروں کی تعمیر میں مدد کرکے ان کو نئی زندگی شروع کرنے میںمدد کرنی چاہئے۔

مشاورت نے دلتوں پر جاری ظلم کی بھی مذمت کی اور بالخصوص ہریانہ کے گاؤںبھگانہ کا ذکر کیا جس کے دلت مہینوں سے جنتر منتر پر اعلیٰ ذاتوں کے ہاتھوںہونے والے ظلم کے خلاف پروٹسٹ کر رہے ہیں۔

مسلمانوں کی شرح آبادی میں اضافے کے دعوی کی مشاورت نے تردید کی اور بتایاکہ حقیقت یہ ہے کہ پچھلے دس سالوں میں مسلم افزائش نسل میں گراوٹ آئی ہے،مزیر برآں پچھلے دہوں میں آسام اور جموں و کشمیر میں تعداد شماری نہ ہونےکی وجہ سے بھی مسلمان آبادی کے اعداد و شمار صحیح درج نہیں ہوئے۔ مشاورت نےمزید برآں کہا کہ ہندو آبادی میں بظاہر کمی بچیوں کو رحم مادریا پیدا ہونےکے فوراً بعد قتل کرنے کی وجہ سے پیدا ہوئی ہے۔

آثار قدیمہ کے تحت قبضہ میں واقع مساجد میں نماز کی اجازت کا مطالبہ کرتےہوئے مشاورت نے کہا کہ مسلمانوں کے ساتھ یہ خصوصی برتاؤ آثار قدیمہ کے تحتآنے والے دوسرے مذاہب کے معابد کے سلسلے میں روا نہیں رکھا جاتا ہے۔ قرارداد میں کہا گیا کہ نماز کی اجازت دینے سے مساجد کی صفائی اور مرمت کے کاممیں مسلمان مددکر سکیں گے۔

عظیم پریم جی کے ویپرو کمپنی میں اپنے حصص کا ۱۸فیصد خیراتی کاموں کے لئےوقف کرنے کے فیصلے کو سراہتے ہوئے مشاورت نے دوسرے مسلم تاجروں اورانڈسٹری والوں کو مشورہ دیا کہ وہ بھی اپنی ملت کے لئے اپنی دولت کا ایکحصہ مخصوص کریں۔

مشاورت نے جماعت اسلامی ہندکی فرقہ وارانہ خیر سگالی کی مہم کی ستائش کرتےہوئے دوسری تنظیموں کو مشورہ دیا کہ وہ دوسرے فرقوں، بالخصوص ہندوؤں سے،عمدہ تعلقات بنائیں جن کو ہندوتوادی جھوٹ اور تاریخ کو مسنح کرکے بہکا رہےہیں۔ مشاورت نے کہا کہ اس طرح کے عمدہ تعلقات ہندوتوا کے زہر کا تریاقہیں۔

مسلم مجلس مشاورت نے لکھنؤ میں عیدالاضحی کے موقعےپر مشترکہ شیعہ سنینماز عید الاضحی کو سراہا اور یاددلایا کہ ایسی مشترکہ نماز پچھلے عیدالفطر میں مسلم مجلس مشاورت کی مدد سے جامعہ ملیہ اسلامیہ دہلی کی مسجد سےشروع ہوئی تھی۔ قرارداد میں کہا گیا کہ شیعہ سنی اتحاد اور اس طرح کےپروگرام ملک اور ملک کے باہر نفرت پھیلانے والوں کا صحیح جواب ہیں۔

ہندوتوا دہشت گردی کے بارے میں مسلم مجلس مشاورت نے کہا کہ حکومت ایسے دہشتگردوں کو ، جو سمجھوتا اکسپریس، مالیگاؤں، اجمیر درگاہ اور مکہ مسجد جیسےواقعات میں ملوث رہے ہیں، بری کرانے یا کم از کم ضمانت پر چھوڑنے کی کوششکررہی ہے۔ سرکاری وکیل روہنی سالیان نے واضح کردیا ہے کہ کس طرح ان پرہندوتوا دہشت گردوں کے معاملات میں نرمی برتنے کا حکم دیا گیا تھا۔قراردادمیں کہا گیا کہ مرکز اور گجرات میں حاکم بی جے پی نے گجرات قتل عام۲۰۰۲اور فرضی انکاؤنٹر زکے قاتلوں کو نہ صرف جیل سے باہر نکالا ہے بلکہ انمیں سے بعض کو اُن کے سابقہ عہدوں پر بھی برقرار کیا ہے۔ کودنانی اور بابوبجرنگی جیسے مجرم آج ضمانت پر چھوٹے ہوئے ہیں۔ قرارداد میں کہا گیا کہ یہرویہ غلط پیغام بھیجتا ہے، مجرموں کی ہمت افزائی کرتاہے اور یہ ثابت کرتاہے کہ درپردہ مودی سرکار سنگھ پریوار کے دہشت گردوں اور مجرموں کی شریک ہے۔

قرارداد میں کہا گیا کہ یہ بات جھبوا کے بلاسٹ سےواضح ہوگئی جسمیں ۸۹لوگوں کی موت ہوئی ہے اور جسکا اصل ملزم ایک بی جے پی لیڈر ہے۔ یواے پی اےکے تحت اس پر مقدمہ چلانے کے بجائے اس کو محض غیر قانونی طور سے بارودوغیرہ جمع کرنے والا بتایا جارہا ہے۔ قرارداد میں کہا گیا کہ اگر حکومتدہشت گردی سے لڑنے کے بارے میں اپنے دعووں کے بارے میں سنجیدہ ہے توہندوتوا دہشت گردی کے کیسوں پریو اے پی اے نافذ کرے اورسناتن سنستھا،ہندویوا واہنی، بجرنگ دل وغیرہ جیسی دہشت گرد تنظیموں پر پابندی لگائے۔

صدرجمہوریہ اور وزیر اعظم ہند وغیرہ کی جلد ہی ہونے والی اسرائیل یاترا کومسلم مجلس مشاورت نے مظلومیں اور بیرونی قبضہ کے شکار لوگوں کی تائید پرمبنی ہندوستانی پالیسی کی خلاف ورزی قرار دیا اور ہندوستان کے اسرائیل سےدفاعی امور میں بڑھتے ہوئے تعاون کو غلط قرار دیا جبکہ اسرائیل مقبوضہعلاقوں میں ظلم ، غزہ محاصرہ اور مسجد اقصیٰ پر قبضہ کی کوششیں مسلسل جاریرکھتے ہوئے ہے نیز وہ اقوام متحدہ کی سینکڑوں قراردادوں کو پس پشت ڈال کراب بھی فلسطین اور شام کی گولان پہاڑیوں پر قابض ہے۔ قرارداد میں مسجداقصیٰ پر مسلسل اسرائیل حملوں کیبھی مذمت کی گئی ہے اور کہا گیا کہ اس کیوجہ مقبوضہ علاقوں میں تیسرا انتقاضہ پھوٹ سکتا ہے جس کے اثرات پورے عالمعرب اور عالم اسلام پر پڑیں گے۔ قرارداد میں کہا گیا کہ اسرائیل عالمی امنوسلامتی کے لئے خطرہ ہے اور جو طاقتیں بالخصوص امریکہ اس مصنوعی ملک کی مددکررہی ہے وہ اسرائیل کے جرائم کی ذمہ دار ہیں۔

مہاجرین کے بارے میں ایک قرارداد میں مسلم مجلس مشاورت نے کہا کہ وہ مشرقوسطیٰ میں امریکی اور یوروپین پالیسیوں کا براہ راست نتیجہ ہیں۔ برسوں سےملینوں افغان مہاجر پاکستان اور ایران میں پڑے ہوئے ہیں، نیز شام اور عراقکے ملینوں مہاجر پڑوسی ممالک میں برسوں سے موجود ہیں لیکن یہ اسی وقت ایک’’مسئلہ‘‘ بنا جب مہاجر یورپ کا بھی رخ کرنے لگے ۔ قرارداد میں کہا گیا کہامریکہ مشرق وسطیٰ کی تشکیل جدید کررہا ہے اور یہ مہاجرین اس پلان کیپیداوار ہیں۔ مغربی طاقتوں کو مشرق وسطیٰ کے ممالک میں تدخل بند کردیناچاہئے تاکہ یہ مہاجرین اپنے گھروں کو لوٹ سکیں۔

شام کے بارے میں ایک قرارداد میں کہا گیا کہ اسدکے نظام کو بچانے کے لئےروسی فوجی تدخل سے شام کا مسئلہ اور بھی پیچیدہ ہوجائے گا۔ قرارداد میںمطالبہ کیا گیا کہ شام کے مسئلے کو پہلی جنیوا کانفرنس کے فیصلوں کے مطابقحل کیا جائے کیونکہ ایک جمہوری اور عوامی حکومت ہی شام کے مسئلے کو حلکرسکتی ’ہے اور ’ ’دہشت گردی‘‘ نیز ’ ’دولت اسلامیہ‘‘ اور القاعدہجیسےگروپوں کا خاتمہ کرسکتی ہے جن کو امریکہ اور اسرائیل کی خفیہ ایجنسیوں نےبنایا ہے۔

یمن کے بارے میں ایک قرارد داد میں مسلم مجلس مشاورت نے کہا کہ بیرونیمداخلت نے یمن کی قبائلی خانہ جنگی کو مزید پیچیدہ بنادیا ہے۔ قرارداد نےتمام گروہوں سے خوں ریزی سے باز رہنے کی اپیل کی اور ان سے مطالبہ کیا کہاقوام متحدہ کے ثالث کی تجاویز کو مان کر بیرونی تدخل کے بغیر ملک میںعادلانہ اور آزاد الیکشن کے ذریعے جمہوری تبدیلی کے لئے جدو جہد کریں۔

)ختم)

 

[end]

Issued at New Delhi on 6 October 2015 by
 -------------------------------------------------------
ALL INDIA MUSLIM MAJLIS-E-MUSHAWARAT
[Umbrella body of the Indian Muslim organisations]
D-250, Abul Fazal Enclave, Jamia Nagar, New Delhi-110025  India
Tel.: 011-26946780  Fax: 011-26947346

Email: mushawarat@mushawarat.com   Web: www.mushawarat.com  Photos: flickr/images  Videos: Youtube

We hope you liked this report/article. The Milli Gazette is a free and independent readers-supported media organisation. To support it, please contribute generously. Click here or email us at sales@milligazette.com

blog comments powered by Disqus