Press Statements

Indian Muslim Mushawarat deliberates on milli, national and international issues

Original_lead-indian-muslim-mushawar

New Delhi, 18 February 2014: The Central Committee of the All India Muslim Majlis-e Mushawarat, the umbrella body of Indian Muslim organisations, met here on Monday, 17 February under the chairmanship of national President Dr Zafarul-Islam Khan. This was the first meeting of the Central Committee this year as well as of the newly elected AIMMM central team. The meeting was attended by the following members: Prof. Akhtarul Wasey, Janab.Syed Samar Hamid, Shaikh Manzoor Ahmad, Janab Masoom Moradabadi (General Secretary), Janab Mohd. Faiyaz Qasmi, Dr Anwarul Islam, Maulana Junaid Ahmad Banarasi, Janab Mohammad Ahmad, Jabnab Ejaz Ahmed Aslam, Grp. Cap. Mohammad Anwar, Janab Mohammad Yusuf, Janab Nusrat Ali, Janab Abdul Aziz (Kolkata), Dr. Masood Ahmad, Dr. MRA Haque, Dr. Javed Jamil, Dr. Syed Farooq, Prof. S.M. Yahya, Janab Rasheed Ahmad Khan IAS (retd), Janab Syyed Mansoor Agha, Prof. Qazi Zainus Sajdin Qasmi, Janab Navaid Hamid, Janab S.M.Y. Nadeem, Dr. Ubaid Iqbal Asim, Prof. Habibur Rahman, Dr Syed Ahmed Khan, Dr. Uzair Ahmad Qasmi, Janab Rahat Mahmood Chaudhary, Janab Mujtaba Farooq, Janab Kamal Farooqui, Janab Ilyas Malik, Prof. Mohd. Sulaiman (General Secretary), Hafiz Rashid Ahmad Chowdhury (Vice President), Janab Mohammad Jafar (Vice President), Janab Ahmad Rashid Shervani (Secretary General), Mufti Ataur Rahman Qasmi (General Secretary), Janab Syed Shahabuddin and Janab Abdul Khaliq.

The AIMMM Central Committee deliberated on organisation, milli, national and international issues. The meeting remembered important personalities of the community who departed after the last meeting of AIMMM, offered condolences to their families and the milliat and prayed for them, especially  SYEDNA MOHAMMED BURHANUDDIN, the 52nd Da'i al-Mutlaq of the Dawoodi Bohra community, who died in Mumbai on 17 January, at the ripe age of 102; GHULAM HASNAIN KAIF NAUGANVI, a current affairs writer, commentator, Urdu poet and writer of letters to newspapers, who died at Nagpur on 11 January; SYED MUZAFFAR HUSAIN  BARNI, noted civil servant, literateur, chairman of National Commission of Minorities and governor of a number of states, who died on 9 February; HAKIM MUHAMMAD MOHTARAM USMANI, noted Unani physician, founder-member of All India Unani Tibbi Congress, who died in Delhi on 8 December; Dr KAMAL AHMAD SIDDIQI, noted Urdu poet, writer, researcher, critic and expert on Ghalib, who died in Delhi's Apollo Hospital in the night of 23 December  2013; MAZHARUL HAQ ALVI, Urdu fiction writer, dramatist and translator of dozens of books, who died in Ahmadabad on 17 December at the age of 90 years; the 65-year-old Bollywood actor,  TV personality and social activist FAROOQUE SHAIKH, who died in Dubai on 14 December 2013; ISHRAT ALI SIDDIQUI, veteran Urdu journalist and former Qaumi Awaz editor, Ishrat, who died in Lucknow on 2 January and Maulana Fareeduzzaman Kairanwi, president of Old Boys Association of Darul Uloom Deoband who died on 14 February.

Indian Muslim Mushawarat

The meeting deliberated on milli, national and international issues and passed the following resolutions:

Merger of Mushawarat groups

Members unanimously appreciated the merger last October of the two factions of AIMMM and paid tributes to all those whose efforts led to the merger.

Communal riots

Communal riots continue in various parts of the country ahead of the general elections. The AIMMM requests all state governments to be vigilant against the attempts of Hindutva elements which use communal violence to polarise society and get Hindu votes. The AIMMM also requests the Election Commission of India to ban all parties and individuals which indulge in communal violence and spread hatred against the communities for political gains. AIMMM registers with pain that UPA government despite numerous promises failed to show any seriousness in getting the communal violence bill passed although its draft has been ready since 2005. AIMMM condemns all “secular” parties which did not allow the passage of this bill through Parliament.

Change of demography though riots

The AIMMM expresses its alarm and displeasure against the use of communal riots to change demography by expelling Muslims from rural areas where they have lived for centuries. This illegal and criminal act must be checked with all the force at the command of the State and people who are behind this diabolical plan should be properly punished and denied right to fight elections. Such forced demographic change has been done earlier in and in areas of Assam and in Gujarat 2002 where some 60,000 uprooted people still did not return to their villages and now in the districts of Muzaffarnagar and Shamli districts where some 20,000 refugees still languish in tents in miserable conditions.

Waqf Development Corp.

National Waqf Development Corporation has now been established with a view to realise the real value of waqf properties for the benefit of the Muslim community. But the details of this scheme are still unknown and as such it is difficult to arrive at a definite opinion about its efficacy. The government should also remove the impression that this corporation will benefit all minorities because the waqf properties are meant for the benefit of the Muslim community. The Union government should at the earliest release the details of this corporation. AIMMM cautions that the NWDC should not be allowed to become yet another lethargic public sector organisation and should not become a backdoor for the government to continue to occupy and utilise waqf properties. In order to make this corporation successful, NWDC's board of management should have a proper representation of serious and reputed representatives of the Muslim community and community organisations of repute.

Ban on SIMI

AIMMM condemns the fresh ban by the Union Home Ministry on the Students Islamic Movement of India (SIMI) for another five years although there is no convincing proof about any terror activity undertaken by this organisation which remains banned since 2001. The ban is used to harass and implicate former SIMI members and Muslim youth in fresh cases although scores of SIMI activists have been acquitted by courts and despite the fact that even this banned organisation’s appeals against the first and subsequent bans are still pending with the Supreme Court. Former SIMI members are being hunted down and constantly harassed by security agencies despite a clear order by the Supreme Court that mere membership of a banned organisation is not sufficient ground to arrest someone. AIMMM notes that while the ban on SIMI is renewed without fail and its former members are unnecessarily harassed, a plethora of Hindutva terror organisations remain untouched like Sanatan Sanstha, Abhinav Bharat, Bajrang Dal and Sri Ram Sena. The Centre even rejected a Maharashtra state recommendation to ban Abhinav Bharat which speaks volumes about the attitude of the Union governmentvis-à-vis saffron terror.

Modi and Gujarat riots

Modi and his defenders are claiming that courts have given him a clean chit, hence any talk of his involvement in the 2002 riots is a contempt of court. This is factually incorrect as Modi has been given a clean chit by the SIT which has come under severe criticism for ignoring solid evidence implicating Modi in the 2002 riots. Zakia Jafari too has decided to go to high court against a lower court's verdict in Gulbarg Colony case. Modi will remain an accused until the apex court, which had called him a "Nero", exonerates him. Modi not only actively supported the riots, he has also been instrumental in dismissing FIRs and withdrawal of cases against the accused and shielding them, in addition to actively denying relief and justice to the victims. Selection of such a person by the saffron party as its prime ministerial candidate indicates the valueless and opportunist politics of Hindutva forces.

Army crimes in J&K

An army court of enquiry's dismissal of charges against the officers accused in the Pathribal fake encounter has once again highlighted the unjust AFPSA law which gives immunity to the army in J&K and areas of Northeast where it is in operation since decades. In the Pathribal fake encounter of March 2000 army personnel had kidnapped and killed five innocent Kashmiri villagers and claimed that they were militants responsible for the Chattisingpora massacre of 34 Sikhs on 20 March 2000which too was allegedly perpetrated by the army to impress upon the visiting US President Bill Clinton the gravity of militancy in J&K. This dismissal of a solid case again calls for the repeal of AFPSA, an anti-people and anti-democratic "law" which thwarts justice.

Violence against Christian minority

In addition to the Muslim community, Hindutva forces have steadily targeted the Christian community across the country. According to a report prepared recently by the Christian Church under Justice (Retd) Michael Saldana, about 4000 Christian were targeted during 2013, and about 400 clergy and community leaders were attacked in 200 anti-Christians incidents across 19 states. It is time Central and state governments took serious notice of the overt and covert activities of the Sangh Parivar outfits which are behind these hate crimes.

Hindutva terror

The trail of Hindutva terror and its connection with the RSS is fairly well-known and accepted now. Even Union Home Ministry and the last two Union home ministers have publicly acknowledged "saffron terror" and spoke about the danger it poses to the secular and democratic fabric of the country. Now with Swami Aseemanand's assertion in his latest interview with Caravan magazine that top bosses of the RSS were directly involved in motivating and financing saffron terror, it becomes a duty of the Union home ministry to treat this danger with the seriousness it deserves, arrest the top RSS leaders involved and ban all saffron organisations involved in terror and promotion of hatred against other communities.

Aam Aadmi Party

AIMMM welcomes the emergence of Aam Aadmi Party (AAP) and considers it a secular alternative. But AAP, which is clear about the scourge of corruption, is not clear about the other scourge of communalism and though it has demanded the formation of SIT to probe the 1984 anti-Sikh riots, it is silent about the communal violence bill, fake encounters and arrests of Muslim youth in the name of fighting terror. In order to become a clear alternative, AAP should clarify its position about these crucial issues as well.

Palestine

The US under Obama is pushing hard to bury the Palestinian issue for good. Secretary of State John Kerry has been shuttling between Tel Aviv and Arab capitals to sell a plan which aims at settling the Palestinian issue for good in Israel's favour. Palestinians are being offered a truncated and disarmed “state” while ceding to Israel West Bank's thickly populated illegal Jewish settlements, ceding part of Arab Jerusalem including a part of the Aqsa Mosque to Israel, and closing the chapter of Palestinian refugees by settling them where they live at present. This is a total sell-out of the Palestinian issue. The AIMMM appeals to the UN ad all peace- and justice-loving nations around the world to ensure justice to the wronged Palestinian people by boycotting and pressuring Israel to accede to at least the minimum Palestinian demand to be allowed to live in peace, security and dignity in the pre-1967 areas of the West Bank and Gaza Strip.

Egypt

The Egyptian junta led by General Sisi, who has now elevated himself to the rank of Field Marshal, is consolidating its grip on power and has got a partisan constitution passed by a dubious referendum which grossly restricts civil liberties and awards unprecedented powers and total autonomy and immunity to the Army, while the main popular force in the country has been banned and declared “terrorist” and the first-ever democratically-elected President of the country is standing trial on grotesque charges. AIMMM condemns the role of the so-called Egyptian "liberals" who have preferred the heavy boots of the army over a moderate regime run by an elected President. AIMMM also condemns the Western and Gulf powers which have recognised and helped the putschists to survive and consolidate their grip over Egypt. AIMMM notes that Egypt and other Arab countries are boiling and a more comprehensive popular movement is on its way to sweep away the local satraps of foreign powers.

Syria

The Syrian civil war continues since three years and has already taken the toll of 125,000 Syrian lives, rendered 9.5 million Syrians refugees and destroyed almost the whole country. Yet the sectarian dictatorship in Damascus refuses to even honour its own commitment in the first Geneva Conference of 2012 to install an interim administration in Damascus to hold free and fair elections. The sectarian regime overlording the destruction of Syria now refuses to give in anything in the current (second) Geneva Conference. The AIMMM, while condemning forces like the terrorist "Islamic State of Iraq and Syria" (Da'ish) which is active in Syria to frustrate the just struggle of the Syrian people, appeals to the world powers, especially the UN, OIC and Arab League to force the sectarian regime in Syria to see reason and transfer power to the people without any more bloodshed and destruction. Moreover, the present rulers of Damascus should be prosecuted by the International Court of Justice for their crimes against the people of Syria including murder of

11,000 people killed while in custody.

Bangladesh

Bangladesh, under Hasina Wajed, is fast becoming a one-party dictatorship. It has just declared itself triumphant in heavily rigged elections boycotted by opposition parties. It is also waging a vendetta war against Jamaate Islami Bangladesh (JIB) by trying its leaders in front of a dubious and partisan tribunal, in a bid to weaken opposition parties. It is a matter of regret that the Indian government is supporting Bangladesh in these undemocratic measures. AIMMM urges Hasina Wajed in the interest of her country and people to stop her politics of vendetta and allow all opposition parties to function normally, lift the unjust ban on JIB and disband the dubious tribunal it set up to annihilate JIB for political gains.

Central African Republic

AIMMM registers its dismay and disbelief at the silence of world bodies, major powers and Muslim countries and organisations on the continued mass murder of Muslims in the Central African Republic where Christian militias are reported to have fallen as low as indulging in cannibalistic practices eating the flesh of their Muslim victims. The silence of Muslim countries and O.I.C. is baffling. Central African Republic, where election of a Muslim to the post of President led to mass hysteria by Christians against the Muslim minority, is a fit case to be expelled from the UNO, Organisation of African Unity and other international forums. The French army stationed in the Central African Republic is responsible for this massacre because it first disarmed Muslims and then watched as an spectator the Christian militias’ attacks on Muslims.

Burma’s Rohingya Muslims

AIMMM repeats its strongest condemnation of the Burmese authorities’ continued persecution of the Rohingya Muslim community in Burma which is deprived of its natural rights as citizens of Burma and forced to live as refugees in its own country or to flee to neighbouring countries like Bangladesh, Malaysia, Thailand and India. Such behaviour is a source of utter shame in the twenty first century. AIMMM urges Burma authorities to rethink their erroneous and racist policies, they should allow Rohingyas to return to their villages and hamlets and should repatriate those who have fled outside Burma due to persecution. AIMMM urges the Indian government to put pressure on Burma govt. to start behaving in a civilised manner and honour the civil, political and human rights of the Rohingyas and to help Burmese Muslim refugees who are in our country.

Bahrain

A popular democratic movement is going on for the last two years in Bahrain which is being brutally crushed by the ruling clique there. AIMMM supports popular, democratic and human rights struggles of people everywhere. AIMMM cautions the rulers of Bahrain to refrain from crushing the popular democratic movement of the people of Bahrain and concede to them all their political and human rights.  

Issue at New Delhi on 18 February 2014 by
 -------------------------------------------------------
ALL INDIA MUSLIM MAJLIS-E-MUSHAWARAT
[Umbrella body of the Indian Muslim organisations]
D-250, Abul Fazal Enclave, Jamia Nagar, New Delhi-110025  India
Tel.: 011-26946780  Fax: 011-26947346

Email: mushawarat@mushawarat.com   Web: www.mushawarat.com  Photos: flickr/images

 

 

آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت
(مسلم تنظیموں کی وفاقی تنظیم)
ڈی250-، ابوالفضل انکلیو، جامعہ نگر، نئی دہلی 110025

فون :  2694780  فیکس: 26946780

email: mushawarat@mushawrat.com

مسلم مجلس مشاورت کی مرکزی مجلس میں ملی، ملکی اور بین الاقوامی مسائل پر غور و خوض

نئی دہلی : ۱۸؍فروری ۲۰۱۴: آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت کی مرکزی مجلس کا اجلاس مرکزی دفتر میں صدر مشاورت ڈاکٹر ظفرالاسلام خان کی صدارت میں۱۸؍فروری بروز دوشنبہ منعقدہوا۔یہ موجودہ سال اور نئی میقات کا پہلا اجلاس تھا۔ اجلاس میں مرکزی مجلس کے مندرجہ ذیل ممبروں نے شرکت کی : پروفیسراخترالواسع، جناب سیدثمرحامد، جناب شیخ منظوراحمد، جناب معصوم مرادآبادی(جنرل سکریٹری)، جناب محمد فیاض قاسمی، ڈاکٹرانوارالاسلام، مولانا جنیداحمدبنارسی، جناب محمداحمد، جناب اعجازاحمداسلم، گروپ کیپٹن محمد انور، جناب محمدیوسف، جناب نصرت علی، جناب عبدالعزیز(کلکتہ)، ڈاکٹرمسعود احمد(علیگڑھ)، ڈاکٹرایم آر اے حق، ڈاکٹرجاوید جمیل، ڈاکٹرسیدفاروق، پروفیسرایس ایم یحيٰ، جناب رشیداحمدخان آئی اے ایس (ریٹائرڈ)، جناب سیدمنصور آغا، پروفیسرقاضی زین الساجدین، جناب نوید حامد، جناب ایس ایم وائی ندیم، ڈاکٹرعبیدعاصم اقبال، پروفیسرحبیب الرحمٰن، ڈاکٹرسید احمدضان، ڈاکٹرعزیراحمدقاسمی، جناب راحت محمودچودھری، جناب مجتبیٰ فاروق، جناب کمال فاروقی، جناب الیاس ملک، پروفیسرمحمد سلیمان(نائب صدر)، حافظ رشیداحمد چودھری(نائب صدر)، جناب محمدجعفر(نائب صدر)، جناب احمد رشید شروانی(سکریٹری جنرل)،  مفتی عطاءالرحمن قاسمی(جنرل سکریٹری) ، ةبفه جناب سید شہاب الدین اور جناب عبدالخالق۔


اجلاس نے مشاورت کے تنظیمی مسائل کے علاوہ ملی،ملکی اور بین الاقوامی حالات پر غور و خوض کیا  ۔  اجلاس میں مشاورت کی پچھلی میٹنگ کے بعد وفات پانے والی اھم شخصیات کو یاد کیا گیا، ان کے لئے دعائے مغفرت کی گئی اور ان کے اہل خاننہ ، متعلقین اور ملت سے تعزیت کی گئی بالخصوص داؤدی بوہرہ فرقہ کے 52ویں داعی مطلق سیدنا محمد برہان الدین جو 102سال کی عمر میں 17جنوری کوممبئی میں وفات پاگئے، غلام حسین کیف نوگانوی، حالات حاضرہ کے مبصر، اردو شاعر اور اخباروں کے مراسلہ نگار جو ناگپور میں 11جنوری کو وفات پاگئے، سید مظفرحسین برنی معروف سابق سول افسر، مصنف و ادیب، قومی اقلیتی کمیشن کے سابق چیرمین اور کئی ریاستوں کے سابق گورنرجو بعمر 90 سال 8فروری کو دہلی میں وفات پاگئے، حکیم محمد محترم عثمانی، معروف یونانی طبیب، کل ہند یونانی طبی کانگریس کے بانی رکن ،جو دہلی میں 8دسمبر کو وفات پاگئے، ڈاکٹر کمال صدیقی، معروف اردو شاعر ، ادیب، محقق، تنقید نگار اور ماہر غالبیات جن کا انتقال 23دسمبر2013کو دہلی میں ہوا ، ڈاکٹر مظہرالحق علوی، اردوناول نگار ، ڈرامہ نویس اور درجنوں کتابوں کے مترجم جوا 17دسمبر کو 90سال کی عمر میں احمدآباد میں وفات پاگئے، فلمی اداکار ، ٹی وی فنکار اور سماجی کارکن فاروق شیخ جن کا 14دسمبر کو دبئی میں اچانک انتقال ہوگیا، جناب عشرت علی صدیقی، بزرگ صحافی اور روزنامہ’’ قومی آواز‘‘ کے سابق مدیرجو لکھنؤ میں بعمر94سال، 2جنوری کو وفات پاگئے اور مولانا فرید الزماں کیرانوی صدر تنظیم ابنائے قدیم دارالعلوم دیوبندجو ۱۴فروری کو وفات پاگئے۔
 

اجلاس میں ملی ، ملکی اوربین الاقوامی صورت حال پر غور کرکے مندرجہ ذیل قراردادیں پاس کی گئیں:
 

مشاورت دھڑوں کا انضمام

ممبران نے متفقہ طور پر پچھلے سال اکتوبر میں  مشاورت کے دونوں دھڑوں کے انضمام کو سراہا اور ان سب لوگوں کو خراجِ تحسین ادا کیا جن کی کوششوں سے یہ کام عمل میں آیا ہے۔

فرقہ ورانہ فسادات

عام انتخابات سے پہلے ملک کے مختلف حصوں میں فرقہ ورانہ فسادات کا سلسلہ جاری ہے۔ کل ہند مسلم مجلس مشاورت تمام ریاستی سرکاروں سے اپیل کرتی ہے کہ وہ ہندتووا عناصر کی ان سرگرمیوں سے چوکنا رہیں جوہندو ووٹ حاصل کرنے کے لئے فرقہ ورانہ فسادات کراکے معاشرے میں دھڑے بندی کراتی ہیں۔ مشاورت الیکشن کمیشن سے بھی اپیل کرتی ہے کہ وہ ایسی تمام پارٹیوں اورشخصیتوں کے الیکشن میں حصہ لینے پر پابندی لگائے جو سیاسی مفاد کے لئے معاشرے میں نفرت پھیلاتی ہیں۔ یہاں مشاورت دکھ کے ساتھ اس بات کو درج کرتی ہے کہ یوپی اے سرکار نے متعدد وعدوں کے باوجود فسادمخالف بل پاس کرنے کے سلسلے میں صرف رسمی کارروائی کی جس کی وجہ سے موجودہ پارلیمنٹ میں بھی 2005سے تیارشدہ بل پاس نہیں ہوسکا۔ مشاورت ان تمام نام نہاد سیکولر پارٹیوں کی مذمت کرتی ہے جنہوں نے اس بل کو پارلیمنٹ میں پاس نہیں ہونے دیا۔

آباد ی کا تناسب بدلنے کے لئے فسادات

صدیوں سے دیہی علاقوں میں آباد مسلمانوں کو گھر بدر کرکے آبادی کا تناسب بدلنے کے لئے فسادات کے حربہ کے استعمال پر مسلم مجلس مشاورت سخت تشویش اور ناپسندیدگی کا اظہار کرتی ہے۔مرکز اور ریاستی سرکاروں کو اپنے تمام اختیارات بروئے کار لاکر اس مجرمانہ سرگرمی کو روکنا چاہئے اور جو لوگ بھی اس انتہائی خطرناک سازش کی پشت پر ہیں ،ان کو سخت سزائیں دی جانی چاہئیں اور ان کو الیکشن میں حصہ لینے کے حق سے محروم کیا جانا چاہئے۔آبادی میں تناسب کی ایسی جبری تبدیلی آسام اور گجرات میں لائی جاچکی ہے، جہاں تقریبا 60,000افراد ابھی تک اپنے آبائی گاؤوں کو نہیں لوٹ سکے ہیں ۔ مظفرنگر اور شاملی کے اضلا ع میں بھی یہی ہوا ہے ،جہاں تقریبا 20,000 افراد اب بھی انتہائی خراب حالات میں عارضی کیمپوں میں رہنے پر مجبور ہیں۔

وقف ڈولپمنٹ کارپوریشن

تاخیر سے ہی سہی، نیشنل وقف ڈویلپمنٹ کارپوریشن کا قیام عمل میں آگیا ہے۔ اس کے نتیجہ میں وقف املاک کا اصل فائدہ مسلم فرقہ کو پہنچنے کی توقع ہے لیکن اس اسکیم کی تفصیلاتجانے بغیر اس کی افادیت کے بارے میں رائے قائم کرنا مشکل ہے۔ اس لئے حکومت کو چاہئے کہ جلد از جلد اس مجوزہ کارپوریشن کی تفصیلات جاری کرے اور اس تأثر کو دور کرے کہ اس کارپوریشن کا فائدہ تمام اقلیات کو ہوگا کیونکہ موقوفہ جائدادیں مسلمانوں کے فائدے کے لئے ہیں۔ اسی کے ساتھ مشاورت خبردار کرتی ہے کہ یہ کارپوریشن بھی دیگر پبلک سیکٹر اداروں کی طرح غیرمتحرک ہوکر نہ رہ جائے اور وقف املاک پر سرکاری قبضے برقرار رکھنے کا چور دروازہ نہ بن جائے۔ کارپوریشن کو کا میاب بنانے کے لئے ضروری ہے کہ اس کی انتظامیہ میں سنجیدہ اور باوقار مسلم افراد اور تنظیموں کی مناسب نمائندگی ہونی چاہئے۔

سیمی پر پابندی

آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت ایس آئی ایم پر مزید پانچ سال کے لئے پابندی میں توسیع کی مذمت کرتی ہے۔ہرچند کہ اس تنظیم کے کارکنوں کے کسی دہشت گرد سرگرمی میں ملوث ہونے کا کوئی نیا ثبوت نہیں ہے تب بھی یہ پابندی عائد کی گئی ہے۔ متعدد کیسوں میں ماخوذدرجنوں سیمی کارکن عدالتوں سے بری کئے جا چکے ہیں، تاہم اس پابندی کو اس کے سابق ارکان اور مسلم نوجوانوں کو نئے کیسوں میں پھنسانے کے لئے استعمال کیا جاتا ہے۔ ان حقائق کے باوجود اس تنظیم پر عائد پابندیوں کے سابق احکامات کے خلاف عذرداریاں ابھی تک سپریم کورٹ میں زیر التوا ہیں۔ سپریم کورٹ کاواضح حکم ہے کہ کسی ممنوعہ تنظیم کا سابق ممبر ہونا کسی کو گرفتار کرنے کا کافی جواز نہیں ہے ،پھر بھی سیکیورٹی ایجنسیاں مسلسل سیمی کے سابق ممبران کو ہراساں کرتی رہتی ہیں اور ان کا پیچھے پڑی رہتی ہیں۔ مسلم مجلس مشاورت کا مشاہدہ ہے کہ سیمی پر پابندی کی توسیع تو مستعدی سے کی جاتی رہتی ہے ، جبکہ سناتن سنستھا، ابھینو بھارت، بجرنگ دل اور سری رام سینا جیسی بھگوا دہشت گرد تنظیموں کو چھوا تک نہیں جاتا ۔ یہاں تک کہ مرکزی حکومت نے ابھینو بھارت پر پابندی عائد کرنے کی مہاراشٹرا سرکار کی سفارش کو بھی مسترد کردیا۔ اس سے بھگوا دہشت گردی کے معاملے میں مرکزی حکومت کے جانبدارانہ رویہ کی قلعی کھل جاتی ہے۔

مودی اور گجرات فسادات

مودی اور ان کی دفاع کرنے والے برابر یہ دعوا کررہے ہیں کہ عدالت نے ان کو کلین چٹ دیدی ہے چنانچہ اب 2002کے گجرات فسادات میں ان کے ملوث ہونے کا ذکر کرنا توہین عدالت ہے۔ یہ بات حقائق کے منافی ہے۔ یہ مبینہ کلین چٹ ان کو ایس آئی ٹی نے دی ہے ،جس پر اس وجہ سے سخت تنقید ہورہی ہے کہ اس نے مودی کے ملوث ہونے کی پختہ شہادتوں کو نظرانداز کردیا۔ گلبرگ سوسائٹی کیس میں ایک مجسٹریٹ کے فیصلے کے خلاف ذکیہ جعفری نے ہائی کورٹ میں جانے کا فیصلہ کیا ہے ۔مودی اس وقت تک ملزم رہیں گے جب تک عدالت عالیہ ، جس نے ان کو ’’نیرو‘‘ سے تعبیر کیا تھا، ان کو پاک صاف قرار نہیں دے دیتی۔ مودی نے نہ صرف یہ کہ سرگرمی کے ساتھ فساد میں معاونت کی، بلکہ ملزمان کے خلاف ایف آئی آر خارج کرانے ، مقدمات واپس لئے جانے اور ان کی پشت پناہی کرنے میں بھی کلیدی کردار ادا کیا ہے۔ علاوہ ازیں انہوں نے متاثرین کو راحت اور انصاف سے انکارمیں بھی سرگرم کردار ادا کیا۔بھگوا پارٹی کا ایسے شخص کو اپنا وزیر اعظم کا امید وار بنانا، ہندتووا کے علم برداروں کے اخلاق و اقدار سے عاری ہونے اور سیاست میں موقع پرستی کو عیاں کرتا ہے۔

جموں و کشمیر میں فوجی جرائم

پتھری بل فرضی انکاؤنٹر کے ملزم فوجی افسران پرعائد الزامات خارج کردینے کے ایک فوجی کورٹ آف انکوائری کے اقدام نے ایک بار پھر عیاں کردیا ہے کہ گزشتہ کئی دہائیوں سے شمال مشرقی ریاستوں اور کشمیر میں نافذ ’اے ایف ایس پی اے‘ AFPSAایک غیر منصفانہ قانون ہے۔ اس قانون کے تحت فوجی افسران کوان کے تمام غیر قانونی اقدامات کے لئے تحفظ ملا ہوا ہے۔ پتھری بل کے فرضی انکاؤنٹر میں فوجیوں نے پانچ بے قصور کشمیریوں کو اغوا کرکے ہلاک کردیا تھا اور یہ دعوا کیا تھا کہ مقتولین 20مارچ سنہ 2000کو چھتی سنگھ پورا (کشمیر)میں 34سکھوں کے قتل میں ملوث ملی ٹنٹ تھے۔ حالانکہ سکھوں کا قتل بھی سازش کے تحت ہوا تھا،جس میں مبینہ طور سے فوجی ملوث تھے۔ سازش کا مقصد یہ تھا کہ امریکی صدر بل کلنٹن کو، جو ہند کے دورے پر آرہے تھے ، یہ تاثر دیا جاسکے کہ کشمیر میں دہشت گردی کی صورت حال کس قدر سنگین ہے۔ ایک ایسے واضح معاملہ میں الزمات کا خارج کیا جانا، ایک مرتبہ پھر اس مطالبہ کو تقویت پہنچاتا ہے کہ غیر جمہوری اور عوام دشمن قانون ’’اے ایف ایس پی اے‘‘ کو فوراً ہٹایا جائے۔

عیسائی اقلیت پر تشدد

مسلم فرقہ کے علاوہ ہندتووا عناصر ملک میں عیسائی اقلیتی فرقہ کو بھی مسلسل تشدد کا نشانہ بناتے رہے ہیں۔ جسٹس (سبکدوش) مائکل سلدانا کی سربراہی میں عیسائی چرچ نے حال میں جو رپورٹ تیار کی ہے اس میں بتایا گیا ہے کہ ملک بھر میں سنہ 2013کے دوران 4000عیسائیوں کو نشانہ بنایا گیا۔ 19ریاستوں میں 200عیسائی مخالف واقعات میں تقریبا 400 مذہبی اور سماجی رہنماؤں پر حملے ہوئے۔ اس صورتحال کا تقاضا ہے کہ مرکزی اور ریاستی سرکاریں سنگھ پریوار کی ان ذیلی تنظمیوں کے خلاف سخت کاروائی کریں جو ان کھلی اور چھپی مجرمانہ سرگرمیوں کو انجام دے رہی ہیں۔

ہندوتوادہشت گردی

آرایس ایس اورہندتووا دہشت گردی کے درمیان کا تعلق صاف طور سے ظاہر ہے اور اب اس کا اقرار بھی کیا جانے لگا ہے۔ وزارت داخلہ اور یکے بعد دیگرے دو مرکزی وزرائے داخلہ برسرعام ’’بھگوادہشت گردی‘‘ اور اس سے ملک کے سیکولر جمہوری نظام کو لاحق خطرے کا اعتراف کرچکے ہیں۔ اب ’’کارواں ‘‘رسالہ کو دئے گئے حالیہ انٹرویو میں سوامی اسیمانند کے یہ تسلیم کرلینے کے بعدکہ آرایس ایس کے چوٹی کے رہنما بھگوا دہشت گردی کی تلقین اور مالی امداد میں براہ راست ملوث رہے ہیں، مرکزی وزارت داخلہ پریہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ پوری سنجیدگی کے ساتھ اس خطرے کے خلاف موثر اقدام کرے اور اس میں ملوث چوٹی کے لیڈروں کو گرفتار کرے نیز دیگر فرقوں کے خلاف نفرت پھیلانے میں سرگرم تنظیموں پر پابندی عائد کرے۔

عام آدمی پارٹی

مشاورت عام آدمی پارٹی کے ظہور کی ترحیب کرتی ہے اور اسے ایک سیکولر متبادل سمجھتی ہے لیکن عام آدمی پارٹی جو کرپشن کے بارے میں صاف ذہن رکھتی ہے، فرقہ واریت کے بارے میں صاف نہیں ہے اور 1984 کے سکھ مخالف فسادات کی جانچ کے لئے SITکی مانگ کرنے والی پارٹی فسادمخالف بل، نقلی انکاؤنٹرز اور دہشت گردی کے نام پر مسلم نوجوانوں کی گرفتاری پر خاموش ہے۔ پارٹی کو طاقتور متبادل بننے کے لئے ان مسائل کے بارے میں واضح رویّہ اختیار کرنا ہوگا۔

فلسطین

اوباما کی سربراہی میں امریکا اپنے مفاد کی خاطر مسئلہ فلسطین کو دفن کرنے کے لئے جی توڑ کوشش کررہا ہے۔ امریکی وزیر خارجہ جان کیری ایک ایسے منصوبے کی تائید حاصل کرنے کی غرض سے تل ابیب اور عرب ممالک کی راجدھانیوں کے چکر لگارہے ہیں جو خالصتاً اسرائیل کے حق میں ہے۔ اس منصوبے کے تحت فلسطین کو ایک غیر مسلح اور مفلوج ’’ریاست ‘‘کا درجہ دینے کے عوض غرب اردن کا ناجائزطور سے ہتھیایا ہوا رقبہ، جس پر غیر قانونی طور سے گھنی یہودی آبادیاں بسادی گئی ہیں، عرب یروشلم اور مسجد اقصیٰ کا ایک حصہ اسرائیل کے حوالے کردینے اور فلسطینی تارکین وطن کی گھرواپسی کے مطالبے کوہمیشہ کے لئے ختم کردینے اوران کو ان کی رہائش کے موجودہ مقامات پر بسانے کی تجویز یں شامل ہیں۔ یہ فلسطین کے مفادات کو کوڑیوں میں نیلام کردینا ہے۔ مسلم مجلس مشاورت اقوام متحدہ اوردنیا بھر کے تمام امن و انصاف پسند ممالک سے اپیل کرتی ہے کہ وہ ظلم و زیادتی کے مارے فلسطینی عوام کو انصاف دلانے کے لئے اسرائیل کا بائیکاٹ کریں اور دباؤ ڈالیں کہ وہ فلسطین کے اس کم سے کم مطالبہ پر آمادہ ہو کہ فلسطینی عوام کو امن و عزت اور عافیت کے ساتھ غرب اردن اور غزہ میں ما قبل 1967 سرحدوں میں رہنے دیا جائے۔

مصر

جنرل السیسی کے قیادت میں، جنہوں نے اب خود اپنا منصب بڑھا کر فیلڈ مارشل کا تمغہ لگا لیا ہے، مصر پر قابض فوجی ٹولے نے اقتدار پر اپنی گرفت مضبوط کرلی ہے اور ایک ایسا جانبدارانہ آئین مشتبہ ریفرنڈم کراکے منظور کرالیا ہے جس میں شہری حقوق کو انتہائی محدود کردیا گیا ہے اور فوج کو غیر معمولی اختیارات اور مکمل خود مختاری دے دی گئی ہے ۔ ملک کی اصل عوامی طاقت کو ’’دہشت گرد‘‘ْ ٹھہرادیا گیا ہے اور ملک کی تاریخ میں جمہوری طور پر منتخب پہلے صدر کو عجیب و غریب الزامات لگاکر عدالت کے کٹہرے میں کھڑا کردیا گیا ہے۔ آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت اس الٹ پھیر میں مصر کے نام نہاد’’ لبرل ‘‘ لیڈروں کی مذمت کرتی ہے ،جنہوں نے جمہوری طور پر منتخب اعتدال پسند صدر کے مقابلے میں فوجی آمریت کو ترجیح دی۔ مشاورت ان مغربی طاقتوں اور خلیجی ممالک کی بھی مذمت کرتی ہے، جنہوں اقتدار پر فوجی تسلط کو تسلم کیا اور اس کو برقرار رکھنے اور مصر پر اپنی گرفت مضبوط کرنے میں مدد کی۔مشاورت محسوس کرتی ہے کہ مصر اور دیگر عرب ممالک میں ابال آرہا ہے اور ایک اورہمہ جہتی عوامی تحریک راہ پارہی ہے جو غیرملکی طاقتوں کے مقامی ایجنٹوں کا صفایا کردے گی۔

شام

شام میں گزشتہ تین سالوں سے خانہ جنگی جاری ہے جس میں اب تک 125,000 شامی باشندے مارے جاچکے ہیں، 95لاکھ افراد خانہ بدوش ہوگئے ہیں اور تقریباً پورا ملک تباہ و برباد ہوچکا ہے۔ اس کے باوجود دمشق کی فرقہ پرست(sectarian) آمرانہ حکومت جنیوا کانفرنس 2012 کی اپنی یقین دہانیوں اور وعدوں تک سے مکر رہی ہے جس میں اس نے قبول کیا تھاکی جلدہی مکمل اختیارات کی حامل انتقالی حکومت قائم کی جائے گی۔ حالیہ جنیوا کانفرنس میں کوئی بھی رعایت دینے سے انکارکر کے دمشق میں قابض نظام شام پرتباہی کا مزید بوجھ ڈال رہا ہے۔ آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت ’’اسلامی مملکت شام و عراق‘‘ (داعش) جیسی دہشت گرد تنظیموں کی مذمت کرتی ہے جو شام میں سرگرم ہیں اور عوام کی جائز جدوجہد کو ناکام کرنے کے درپے ہیں۔ مشاورت تمام عالمی طاقتوں، خصوصاً یو این او ،تنظیم عالم اسلامی اور عرب لیگ سے اپیل کرتی ہے کہ شام کی فرقہ پرست حکومت کوحقیقت پسندی سے کام لینے اور مزید خون خرابہ کے بغیر اقتدار عوام کے حوالے کردینے پر آمادہ کریں۔علاوہ ازیں دمشق کے حکمرانوں کو عالمی عدالت انصاف سے ان کے جرائم کے لئے سزا دلائی جائے ،جن میں سرکاری تحویل میں 11,000 افراد کی ہلاکت کا جرم بھی شامل ہے۔

بنگلہ دیش

حسینہ واجد کے زیر حکومت بنگلہ دیش تیزی سے ایک پارٹی کی آمریت میں تبدیل ہورہا ہے۔یہ پارٹی حال ہی میں بھاری دھاندلیوں اور اپوزیشن کے بائی کاٹ کے درمیان منعقدہ الیکشن میں خود کو فاتح اعلان کرچکی ہے۔اس نے اپوزیشن کو کمزور کرنے کی غرض سے ایک مشکوک اور جانبدارانہ ٹربیونل کے سامنے مقدمات قائم کرکے جماعت اسلامی بنگلادیش کے خلاف بھی انتقامی مہم چھیڑ رکھی ہے۔ یہ نہایت افسوس کی بات ہے کہ حکومت ہند ان غیرجمہوری اقدامات کی تائید کررہی ہے۔ آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت حسینہ واجد کومشورہ دیتی ہے کہ وہ اس انتقامی مہم کو ترک کریں، جماعت اسلامی بنگلہ دیش پر عائد غیر منصفانہ پابندی کو ختم کریں ، سیاسی فائدے کے لئے قائم مشکوک ٹربیونل کو کالعدم کریں جس کا مقصد جماعت اسلامی کو ختم کرنا ہے اور اپوزیشن پارٹیوں کو معمول کے مطابق کام کرنے دیں۔

وسط افریقی جمہوریہ

آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت وسط افریقی جمہوریہ میں مسلمانوں کے مسلسل اجتماعی قتل کی واراتوں پرعالمی اداروں، بڑی طاقتوں اور مسلم ممالک و تنظیموں کی خاموشی پر حیرت اور مایوسی کا اظہار کرتی ہے۔ وہاں سے برابریہ خبریں آ رہی ہیں کہ عیسائی ملیشیا انسان خوری کی حد تک گر گئی ہیں اور اپنے شکار مسلمانوں کاگوشت تک کھارہی ہیں۔مسلم ممالک اور تنظیم عالم اسلامی کی خاموشی پریشان کن ہے۔ وسط افریقی جمہوریہ میں صدر کے منصب پر ایک مسلمان کے انتخاب کی وجہ سے مسلم اقلیت کے خلاف عیسائیوں میں دیوانگی کا عالم ہے۔ اس المیہ میں وسط افریقی جمہوریہ میں موجود فرانسیسی فوج کا ہاتھ ہے جس نے مسلمانوں سے اسلحے چھینے اور عیسائی میلیشیا کے حملوں کو خاموش تماشائی کی طرح دیکھ رہی ہے۔ یہ ایک ایسا معاملہ ہے کہ اس ملک کو یو این او، افریقی اتحاد تنظیم اور تمام بین اقوامی اداروں سے نکال باہر کیا جانا چاہئے۔

برما کے روہنگیا مسلمان

روہنگیا مسلمانوں کے بارے میں مسلم مجلس مشاورت اپنی پچھلی قراردادوں کی توثیق کرتے ہوئے برمی حکومت کی شدیدترین مذمت کرتی ہے جو مسلسل برما کے روہنگیا مسلمانوں پر عرصۂ حیات تنگ کئے ہوئے ہے، ان کے فطری حقوق کو سلب کئے ہوئے ہے اور ان کو خود اپنے ملک میں یا تو پناہ گزیں بنا کر رکھ دیا ہے یا ان کو دوسرے پڑوسی ممالک مثلاً بنگلادیش، ملیشیا، تھایلینڈ اور ہندوستان بھاگنے پر مجبور کر رکھا ہے۔ اس اکیسویں صدی میں یہ طرزعمل باعث شرم ہے۔ مسلم مجلس مشاورت برما کی حکومت کو صلاح دیتی ہے کہ اپنے رویّے اور نسل پرست پالیسیوں پر نظرثانی کرے، روہنگیا مسلمانوں کو واپس اپنے گھروں کو جانے دے اور جو برما کے باہر ظلم کی وجہ سے بھاگ گئے ہیں انھیں واپس لائے۔ مسلم مجلس مشاورت حکومت ہند کو صلاح دیتی ہے کہ برما کی حکومت پر اثرانداز ہو تا کہ برما کی حکومت روہنگیا مسلمانوں کے شہری، سیاسی اور انسانی حقوق کا احترام کرے۔ مسلم مجلس مشاورت حکومت ہند سے یہ بھی درخواست کرتی ہے کہ ہمارے ملک میں موجود برمی پناہ گزینوں کی مدد کرے۔

بحرین

بحرین میں پچھلے دوسال سے عوامی جمہوری تحریک چل رہی ہے جس کو وہاں کا حاکم ٹولہ بری طرح سے کچل رہا ہے۔ مسلم مجلس مشاورت عوامی امنگوں، انسانی اور جمہوری حقوق کی ہر جگہ تایید کرتی ہے اور بحرین کے حکمرانوں کو متنبہ کرتی ہے کہ اپنے عوام کی جمہوری تحریک کو کچلنے کے بجائے عوام کو وہ سارے سیاسی اور انسانی حقوق دیں جو انکا حق ہے۔
(ختم)

blog comments powered by Disqus